The news is by your side.

Advertisement

جیل میں قید نواز شریف اور مریم نواز بڑی مشکل میں پھنس گئے

اسلام آباد : اسلام آباد ہائی کورٹ نے سابق نااہل وزیراعظم نواز شریف اور ان کی صاحبزادی مریم نواز کے خلاف توہین عدالت کی  درخواست پر فیصلہ محفوظ کرلیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق نااہل وزیراعظم نواز شریف اور انکی صاحبزادی مریم نواز کے خلاف توہین عدالت درخواست پر سماعت ہوئی، مقدمے کی سماعت اسلام آباد ہائیکورٹ کے سنگل رکنی بنچ جسٹس عامر فاروق نے کی۔

درخواست گزار وکیل عدنان اقبال عدالت میں پیش ہوئے، وکیل نے عدالت کے سامنے موقف اختیار کیا کہ پانامہ فیصلے کے بعد نواز شریف اور مریم نواز عدالتوں کے خلاف نفرت پھیلا رہے ہیں، نواز شریف اور مریم نواز نے کوٹ مومن جلسے میں اور پنجاب ہاؤس میں عدلیہ مخالف تقاریر کیں۔

وکیل عدنان اقبال کا کہنا تھا کہ نواز شریف اور مریم نواز کے خطابات اور بیانات توہین عدالت کے زمرے میں آتے ہیں، عدالت نواز شریف اور مریم نواز کے خلاف توہین عدالت کی کارروائی کرے۔

یاد رہے اسلام آباد ہائی کورٹ میں ہی نواز شریف کی لائیو تقاریر اور بیانات پر پابندی کے لیے توہین عدالت کی درخواست پر سماعت ہوئی تھی ، درخواست گزار مخدوم نیاز انقلابی ایڈووکیٹ کی جانب سے کیس پر عدم پیروی کی وجہ سے عدالت نے درخواست خارج کردی تھی۔

درخواست میں کہا گیا تھا کہ نواز شریف مسلسل میڈیا پر عدلیہ اور دیگر قومی اداروں کی توہین کر رہا ہے، کیس کا فیصلہ ہونے تک نواز شریف کی براہ راست تقریر نشر کرنے پر حکم امتناع جاری کیا جائے، اخبارات میں بھی نواز شریف کے بیانات شائع کرنے پر پابندی عائد کیا جائے۔

عدالت نے نااہل وزیر اعظم نواز شریف کو توہین عدالت کا نوٹس جاری کر رکھا تھا جبکہ وزارت اطلاعات، پیمرا اور پریس کونسل کو بھی نوٹس جاری کر رکھا تھا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں