The news is by your side.

Advertisement

ایمان مزاری اور بلوچ طلبہ کے خلاف غداری کے مقدمے پر اسلام آباد ہائیکورٹ کا سخت فیصلہ

اسلام آباد: ایمان زینب مزاری اور بلوچ طلبہ کے خلاف غداری کے مقدمے پر اسلام آباد ہائیکورٹ کا سخت فیصلہ سامنے آیا ہے، عدالت نے یہ بھی واضح کر دیا کہ غداری اصل میں کیا ہے۔

وفاقی وزیر شیریں مزاری کی بیٹی ایمان زینب مزاری ایڈووکیٹ کے خلاف گزشتہ روز غداری کے مقدمے کا اندراج کیا گیا تھا، جسے انھوں نے اسلام آباد ہائیکورٹ میں چیلنج کیا، آج چیف جسٹس اطہر من اللہ نے اس درخواست پر سماعت کے بعد تحریری حکم نامہ جاری کر دیا۔

عدالت نے کہا کہ ایف آئی آر پڑھنے سے ظاہر ہوتا ہے کہ یہ پہلا کیس نہیں ہے جو پولیس نے طاقت کا غلط استعمال کیا، پاکستان کے دارالحکومت میں بعض طبقات کو نشانہ بنانے اور اختلاف رائے، تنقید اور سیاسی بحث کو دبانے کے لیے اختیارات کا بار بار غلط استعمال ناقابل برداشت ہے۔

حکم نامے میں کہا گیا کہ جواب دہندگان نے اختلاف رائے اور حق کی آواز کو دبانے کے لیے اپنے اختیارات کا غلط استعمال کیا، قائد اعظم یونیورسٹی سے بلوچستان سے تعلق رکھنے والے طلبہ نے پریس کلب کے سامنے مبینہ جبری گمشدگیوں کے خلاف پُر امن احتجاج کیا تھا، لیکن جواب دہندگان نے پرامن مظاہرین کو منتشر کرنے کے لیے ضرورت سے زیادہ طاقت کا استعمال کر کے اپنے اختیارات سے تجاوز کیا۔

عدالتی حکم نامے کے مطابق درخواست گزار کو الیکٹرانک میڈیا کے ذریعے اطلاع ملی تھی کہ پرامن شرکا کے خلاف فوجداری مقدمہ درج کیا گیا ہے، سینئر سپرنٹنڈنٹ پولیس فیصل کامران ایک اور کیس کے سلسلے میں عدالت میں موجود تھے، انھوں نے ایک فوجداری مقدمہ ایف آئی آر نمبر 203/2022 کے تحت درج کیا۔

عدالت نے قرار دیا کہ صوبہ بلوچستان کے نعرے بلند کرنا خواہ کتنا ہی سخت کیوں نہ ہو، تخیل کی حد تک کیوں نہ ہو، اسے مجرمانہ سازش یا جرم نہیں سمجھا جا سکتا، ایف آئی آر میں جن جرائم کا ذکر کیا گیا ہے ان سے یہ بھی ظاہر ہوتا ہے کہ پہلی نظر میں، اختلاف رائے کی حوصلہ شکنی کرنے اور ریاست کے اقدامات یا عدم فعالیت سے پیدا ہونے والی شکایات کا اظہار کرنے کی کوشش کی گئی ہے۔

عدالت نے واضح کیا کہ آئین کے تحت چلنے والے معاشرے میں طاقت کا اس طرح کا غلط استعمال ناقابل برداشت ہے، اختلاف رائے کی آوازوں کو دبانا یا ریاست اس کے اداروں یا عوامی اداروں کے خلاف شکایات اٹھانے کی حوصلہ شکنی کرنا غداری ہے، نوجوان شہریوں خاص طور پر صوبہ بلوچستان سے تعلق رکھنے والے افراد کو ریاست اور عوامی اداروں کی طرف سے اپنے اظہار کے لیے حوصلہ افزائی کرنی چاہیے، ایک سازگار ماحول پیدا کرنا چاہیے تاکہ وہ سیاسی مباحثوں میں بلا روک ٹوک اور بغیر کسی خوف کے حصہ لے سکیں۔

حکم نامے میں مزید کہا گیا ہے کہ ریاست اور ادارے شہریوں کو نقصان سے بچانے اور ان کی خدمت کرنے اور انھیں آئین کے تحت فراہم کردہ اپنے بنیادی حقوق کے استعمال اور ان سے لطف اندوز ہونے کے قابل بنانے کے لیے موجود ہیں، طاقت کے غلط استعمال کے ذریعے پرامن اجتماع کو دبانا یا اس میں مداخلت کرنا سب سے سنگین خلاف ورزی اور وفاداری کے فرائض کی خلاف ورزی ہے۔

عدالت نے حکم دیا کہ سیکریٹری وزارت داخلہ، چیف کمشنر، انسپکٹر جنرل پولیس اور سیکریٹری وزارت انسانی حقوق عدالت کے روبرو ذاتی طور پر پیش ہوں، اور پرامن نوجوان شہریوں کے خلاف استعمال کیے جانے والے طاقت کے زیادہ استعمال کا جواز پیش کریں، اور فوجداری مقدمے درج کرنے کی وجہ پیش کریں اور عدالت کو مطمئن کریں، آئین کے تحت ضمانت دیے گئے بنیادی حقوق کے حوالے سے بھی عدالت کو مطمئن کیا جائے۔

عدالت نے کہا کہ ریاستی اہل کاروں کی جانب سے تشدد اور بغاوت کی کارروائیاں ناقابل معافی اور ناقابل برداشت ہیں، رجسٹرار آفس اس حکم کی کاپیاں جواب دہندگان اور مذکورہ بالا حکام کو تعمیل کے لیے خصوصی میسنجر کے ذریعے بھیجیں، رجسٹرار آفس اٹارنی جنرل کو بھی نوٹس جاری کرے، اور اس کیس پر دوبارہ سماعت 7 مارچ کے لیے رجسٹرار آفس مقرر کرے۔

یاد رہے کہ بلوچ طلبہ نے یکم مارچ کو نیشنل پریس کلب کے سامنے مبینہ جبری گمشدگیوں کے خلاف احتجاج کیا تھا جس پر پولیس نے لاٹھی چارج کیا، بعد ازاں رکن قومی اسمبلی محسن داوڑ اور زینب ایمان مزاری سمیت احتجاج میں شریک سیکڑوں طلبہ کے خلاف غداری کا مقدمہ درج کیا گیا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں