The news is by your side.

Advertisement

قائد اعظم کی تصویر خراب کرنے یا بلا اجازت ہٹانے پر کیا سزا ہوگی؟

اسلام آباد: سینیٹ میں آج ایک کریمنل لاز ترمیمی بل پیش کیا گیا ہے جس میں بانئ پاکستان قائد اعظم محمد علی جناح کی تصویر خراب کرنے یا بلا اجازت ہٹانے کا جرم ناقابل ضمانت قرار دیا گیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق آج سینیٹ اجلاس میں سینیٹر پیر صابر شاہ نے کریمنل لاز ترمیمی بل پیش کیا، جس میں کہا گیا ہے کہ قائد اعظم کی تصویر خراب کرنے پر ملزم کو بغیر وارنٹ گرفتار کیا جا سکتا ہے، اور یہ جرم ناقابل ضمانت ہوگا۔

ترمیمی بل کے مطابق اس آئینی ترمیم کے تحت اب قائد اعظم کی تصویر خراب کرنے یا بلا اجازت ہٹانے کے جرم کی سزا 3 سال سے بڑھا کر 5 سال کر دی گئی ہے۔

بل میں کہا گیا ہے کہ قائد اعظم کی تصویر کو خراب کرنا مجرمانہ فعل ہے، نئی آئینی ترمیم کے تحت قائد اعظم کی تصویر خراب کرنے یا جلانے پر سزا دی جا سکے گی، اس جرم پر 5 سال تک قید اور 5 ہزار روپے تک جرمانہ ہوگا۔

یہ پیش کردہ ترمیمی بل چیئرمین سینیٹ صادق سنجرانی نے متعلقہ کمیٹی کو بھجوا دیا۔

سینیٹ میں آج تعلیمی امتحانات میں غلط ذرائع کی ممانعت کا بل بھی پیش کیا گیا، یہ بل سینیٹر جاوید عباسی نے پیش کیا،جسے متعلقہ قائمہ کمیٹی کے سپرد کر دیا گیا ہے، بل کے مطابق امتحان میں ناجائز ذرائع استعمال کرنے یا معاونت پر 1 ماہ قید، 50 ہزار جرمانہ ہوگا۔

امتحانی مرکز میں میں بداخلاقی کے ارتکاب، خفیہ مواد کو افشاں کرنے، امتحانی ریکارڈ، رزلٹ کارڈ، ڈگری کی جعل سازی پر بھی 1 ماہ قید، 50 ہزار روپے جرمانہ ہوگا، اور امتحانات میں غلط ذرائع استعمال کے کیس کی سماعت درجہ اوّل کا مجسٹریٹ کرے گا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں