site
stats
سندھ

عمران فاروق کے قتل کی سازش کو بےنقاب ہونا چاہئیے، فاروق ستار

کراچی : ایم کیو ایم پاکستان کے سربراہ ڈاکٹر فارو ق ستار نے کہا ہے کہ شہید عمران فاروق بھائی کے قتل کی سازش کو بےنقاب ہونا چاہئیے، ناراض کارکنان پارٹی میں واپس آجائیں۔

ان خیالات کا اظہار انہوں نے ایم کیو ایم کے عارضی مرکز بہادر آباد میں ایم کیو ایم کے شہید کنونیر ڈاکٹرعمران فاروق کی ساتویں برسی کے موقع پر قران خوانی کے بعد صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کیا، قرآن و فاتحہ خوانی میں مولانا احترام الحق تھانوی نے خصوصی دعا کرائی۔

فاروق ستار نے کہا کہ ہماری پارٹی میں نظم و نسق کے بانی ڈاکٹرعمران فاروق تھے، ان کی شخصیت غیر متنازع تھی، عمران فاروق بھائی کے قتل کی سازش کو بےنقاب ہونا چاہئیے۔

ان کا کہنا تھا کہ ہم نے کل بھی سودا نہیں کیا اوراب بھی نہیں کریں گے، ایم کیوایم پاکستان میں پسند نا پسند نہیں بلکہ کارکردگی پر فیصلے ہوں گے، ناراض کارکنان سے کہتا ہوں ناراضگی دورکریں اور کام کریں، ان کے خدشات دور کیے جائیں گے۔

پارٹی کی تنظیم نو کی جارہی ہے۔ عوامی شکایات کا اندازہ ہے، الیکشن سے پہلے اپنی کارکردگی بہتر بنانا ہوگی، انہوں نے کہا کہ اگر کوئی یہ سمجھ رہا ہے ہم 22اگست کے بعد بکھرگئے ہیں تو یہ وہ غلط ہے، لیکن ہم ہرمشکل کے بعد مزید نکھر گئےہیں، فاروق ستار نے کہا کہ ایم کیوایم پاکستان حلوہ نہیں لوہے کا چنا ہے۔

فاروق ستار نے کہا کہ ایم کیوایم پاکستان اپنی جگہ ایک مستند سیاسی جماعت ہے، ہمیں حلوہ سمجھنے والے اور بکھرتا ہوا دیکھنے کی خواہش رکھنے والے الیکشن میں اپنی ناکامی دیکھ چکے ہیں ۔

ڈاکٹرعمران فاروق کے بارے میں

یاد رہے کہ ایم کیو ایم کے رہنما ڈاکٹر عمران فاروق آج سے سات سال قبل 16 ستمبر 2010کو برطانوی دارالحکومت لندن میں دو نوجوانوں نے چاقو اور اینٹ کے وار کرکے ایم کیو ایم کے کنوینر ڈاکٹر عمران فاروق کو قتل کردیا تھا۔

پوسٹ مارٹم رپورٹ میں انکشاف ہوا تھا کہ پچاس سالہ رہنما چھریوں کے وار سے ہلاک ہوئے تھے جبکہ جائے وقوعہ سے ایک ساڑھے پانچ انچ کی چھری اور ایک اینٹ بھی برآمد کی گئی تھی۔


مزید پڑھیں: ایم کیو ایم پاکستان کے ساتھ ہوں، والدہ عمران فاروق


اس سلسلے میں پاکستان میں معظم علی، محسن اور کاشف نامی تین افراد مرکزی ملزم کی حیثیت سے گرفتار ہیں جبکہ ان تینوں سمیت دیگر ملزمان سے تفتیش کے دوران کئی انکشافات بھی سامنے آئے ہیں۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top