The news is by your side.

Advertisement

عمران فاروق قتل کیس فیصلہ کن موڑ پر، ایف آئی اے نے شہادتیں مکمل کرلیں

اسلام آباد: ایم کیو ایم کے سینئر رہنما ڈاکٹر عمران فاروق کا قتل کیس  فیصلہ کن موڑ پر پہنچ گیا.

تفصیلات کے مطابق 16 ستمبر 2010 کو لندن میں اپنی رہائش گاہ کے باہر قتل ہونے والے ڈاکٹر عمران فاروق کا کیس اپنے اختتامی مرحلے میں داخل ہوگیا.

ایف آئی اے نے ساڑھے تین سال بعد شہادتیں مکمل کرلیں، ادھر انسداد دہشت گردی عدالت نے بھی ملزمان کا بیان قلم بند کرنے کا فیصلہ کرلیا۔

ملزمان کو دس اپریل کو سوالنامہ دیا جائے گا، خالدشمیم، محسن علی اور معظم کا تین سو بیالیس کے تحت بیان قلم بند کیا جائے گا.

ایف آئی اے کا کہنا ہے کہ تمام دستیاب شواہدعدالت کے سامنے پیش کردیے، انسداددہشت گردی عدالت نے سماعت دس اپریل تک ملتوی کردی۔

مزید پڑھیں: عمران فاروق قتل کیس، ایف آئی اے سے آئندہ سماعت پر شہادتوں کا تحریری بیان طلب

یاد رہے کہ ایف آئی اے نے 2015 میں عمران فاروق کے قتل میں مبینہ طور پر ملوث ہونے کے شبے میں بانی متحدہ اور ایم کیو ایم کے دیگر سینئر رہنماؤں کے خلاف مقدمہ درج کیا تھا۔ قتل کے الزام میں تین ملزمان محسن علی سید، معظم خان، خالد شمیم کو گرفتار کیا گیا تھا، جبکہ ایک اور ملزم کاشف خان کامران کی موت کا دعویٰ کیا گیا.

یاد رہے کہ گزشتہ سال انٹرپول نے بانی ایم کیو ایم کے ریڈ وارنٹ کے لیے تعاون سے انکار کرتے ہوئے پاکستانی حکام کی جانب سے بھیجی گئی درخواست اعتراض لگا کر واپس کردی تھی۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں