The news is by your side.

Advertisement

سابق حکمرانوں نے سیاسی مفادات کی خاطر ملک کو قرضوں کی دلدل میں دھکیلا، وزیراعظم

اسلام آباد: وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ سابق حکمرانوں نے سیاسی مفادات کی خاطر ملک کو قرضوں کی دلدل میں دھکیلا ہے۔

تفصیلات کے مطابق وزیراعظم عمران خان کی زیر صدارت توانائی سے متعلق اعلیٰ سطح کا اجلاس ہوا، جس میں توانائی کے شعبے میں ملک کو درپیش مسائل خصوصاً گردشی قرضوں کا جائزہ لیا گیا۔

وزیراعظم عمران خان کو بتایا گیا کہ 2017-18 میں گردشی قرضوں میں 450 ارب روپے کا اضافہ ہوا، 100 فیصد بجلی چوری کے علاقوں میں بلاتعطل بجلی کی فراہمی سے گردشی قرضے میں اضافہ ہوا، مہنگی بجلی کی پیداوار، چوری، بلوں کی عدم ادائیگیوں پر گردشی قرضے میں اضافہ ہوا۔

عمران خان کو بریفنگ دی گئی کہ بجلی کی 41 فیصد پیداوار درآمد شدہ مہنگے تیل سے کی جارہی ہے، عالمی سطح پر تیل کی قیمتوں میں اضافے سے پیداواری لاگت میں اضافہ ہوا، سابقہ حکومتوں کی جانب سے اس اہم پہلو کو یکسر نظر انداز کیا گیا۔

مزید پڑھیں: وفاقی کابینہ میں بڑی تبدیلیاں، کئی وزرا کے قلم دان تبدیل

وزیراعظم کو بتایا گیا کہ نجی شعبے کے بجلی کے کارخانوں کی پیداوار بتدریج کم ہوجاتی ہے، بجلی بنانے والے کارخانوں کو اصل پیداوار سے بھی کئی گنا زیادہ قیمت ادا کرنا پڑتی ہے، اضافی کارخانے لگاتے وقت بجلی کی ترسیل اور تقسیم کے پہلو کو یکسر نظر انداز کیا گیا۔

عمران خان نے ترسیل و تقسیم کے شعبے میں جدید ٹیکنالوجی متعارف کرانے پر خصوصی توجہ دینے کی ہدایت کی اور رمضان میں بجلی کی بلاتعطل فراہمی حد درجہ ممکن بنانے کی ہدایت جاری کی۔

انہوں نے کہا کہ ایک طرف بیرونی قرضوں سے مہنگی بجلی کے کارخانوں کا قیام اور دوسری جانب ترسیل و تقسیم کے شعبے کو نظر انداز کرنا مجرمانہ غفلت ہے اور ایسا کرنے والے قومی مجرم ہیں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں