The news is by your side.

Advertisement

قوم انتظارمیں ہے، سپریم کورٹ پاناما کیس کا فیصلہ جلد سنائے، عمران خان

اسلام آباد : پی ٹی آئی کے چیئرمین عمران خان نے کہا ہے کہ سپریم کورٹ کے ججزسے درخواست ہے کہ پوری قوم کو پاناما لیکس کیس کے فیصلے کا انتظار ہے، شکرہےکہ فرینڈلی اپوزیشن کاخاتمہ ہوگیا، شریف برادران مظلوم شکلیں بناکر لوگوں کو بےوقوف بنا رہے ہیں۔

ان خیالات کا اظہار انہوں نے اسلام آباد میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کیا، عمران خان نے کہا کہ اس وقت ملکی معیشت کو نقصان پہنچ رہا ہے اور حالات مزید بگڑتے جارہے ہیں، ججزسے صرف درخواست کررہاہوں۔

جانتا ہوں ججز پر نوازشریف مافیا دباؤ ڈال رہی ہوگی مجھے بھی دس ارب روپے کی آفرکی گئی، عدالت عظمیٰ کے ججز سے گذارش ہے کہ پاناما کیس کا فیصلہ جلد سنا دیں پوری قوم کو پاناما لیکس کیس کے فیصلے کا بے چینی سے انتظار ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ سرحدوں پردہشت گردی ہورہی ہے، لاہورمیں دھماکا ہوا اور وزیراعظم مالدیپ چلے گئے، سندھ اسمبلی بھی وزیراعظم سے استعفیٰ مانگ رہی ہے، کےپی کےاسمبلی میں بھی استعفے کیلئےقرار داد بھیجی جاچکی ہے، وکلا، سول سوسائٹی سمیت سب وزیراعظم سے استعفیٰ مانگ رہے ہیں، پوری دنیا کو پتہ چل گیا ہے کہ پاکستان کا وزیراعظم کرپشن میں ملوث ہیں۔

دونوں بھائی مظلوم شکلیں بناکر لوگوں کو بے وقوف بنا رہے ہیں

چیئرمین پی ٹی آئی نے شریف برادران کو شدید تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ دونوں بھائی معصوم اور مظلوم شکلیں بناکر لوگوں کو بے وقوف بنا رہے ہیں، یہ لوگ صحافیوں اور میڈیا ہاﺅسز کو بھی خریدنے کی کوششیں کر رہے ہیں، خود رشوت کا پیسہ چلارہے ہیں اور کہہ رہے ہیں کہ باقی لوگ بھی سب کرپٹ ہیں، ان کے ضمیر فروش وزراء لوگوں کو دھوکا دے رہے ہیں۔

منی ٹریل کے حوالے سے انہوں نے کہا کہ میں نےاپنی پوری منی ٹریل عدالت میں پیش کی، میں اپنے فلیٹ فروخت کرکے پاکستان پیسہ لایا تھا جبکہ ان لوگوں نے بیرون ملک محلات رکھے ہوئے ہیں، ایک کھلاڑی 11 سال تک کرکٹ کھیلتا ہے تب کہیں جاکر60لاکھ کا فلیٹ خریدتا ہے۔

کہاں یہ60لاکھ کاایک فلیٹ اورکہاں ساڑھے6ارب کامحل؟ جس کی خریداری کیلئے پاکستان سے چوری کیا ہوا پیسہ غیرقانونی طریقے سے باہر بھجوایا گیا، پوچھتا ہوں کہاں سے آیا اتنا پیسہ ؟ یہ پیسہ پاکستانی قوم کا ہے۔

حلال اور حرام کی کمائی کرنے والوں کو ایک ہی کیا جارہا ہے، لندن میں جوفلیٹ خریدا، کیاوہ حرام کی کمائی سےخریدا تھا، شکریہ ادا کرتا ہوں ان لوگوں کا کہ جنہوں نے میرا40سال پرانا ریکارڈ تلاش کیا۔

میں تو کاروباری شخصیت نہیں تھا پھر بھی منی ٹریل پیش کی، یہ تو کہتےہیں ہم عرصہ دراز سے کاروباری تھے۔

جنگ میڈیا گروپ کے میر شکیل الرحمٰن کے حوالے سے ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ میرشکیل کی شکل کل سپریم کورٹ میں دیکھ لیتے، میرشکیل بھی وہی باتیں کررہا تھاجو لیگی وزرا کرتے ہیں، کبھی کبھی اللہ پاک انسان کےمنہ سے سچ نکلوا ہی دیتا ہے۔

میر شکیل کہہ رہاتھا کہ صحافت کو نہیں جانتا میں تو بزنس مین ہوں، میرشکیل تم اپنے میڈیا ہاؤسز کو پیسہ بنانے کیلئے استعمال کرتے ہو، صحافت ایک بڑانام، پروفیشنل ہے اوریہ اس سے کاروبارکرتا ہے، میرشکیل کرپٹ خاندان کو بچانے کیلئے اپنے میڈیا گروپ کو استعمال کررہا ہے۔

ملک کو لوٹنے والے کے ساتھ یہ میڈیا ہاؤس بھی ملاہوا ہے، میڈیا کا کام شفافیت ہے، بلیک میلنگ کرنا نہیں، میں شروع دن سے کہہ رہا تھا کہ میرشکیل پیسے سے چلتا ہے۔

عوام میر شکیل کے میڈیا ہاؤس کا بائیکاٹ کریں 

عمران خان نے عوام سے اپیل کی کہ عوام آج سے میرشکیل کے میڈیاہاؤس کا بائیکاٹ کریں اور میرشکیل الرحمان کوسبق سکھائیں، کارکنان اور سول سوسائٹی بھی میرشکیل کے میڈیا گروپ کا بائیکاٹ کرے۔ میڈیا کا کام جھوٹ کو بےنقاب کرنا اور سچ کو سامنے لانا ہوتا ہے، مافیا کےخلاف کھڑے ہونے والے میڈیا ہاؤسز کو سلام پیش کرتا ہوں۔

انہوں نے کہا کہ جمہوریت کی تاریخ لکھی جائےگی تو صحافیوں کا خاص ذکر ہوگا، صحافیوں اور کچھ میڈیا ہاؤسز نےجمہوریت کی بقا کیلئے بہت نقصان اٹھایا۔

عمران خان نے کہا کہ خورشید شاہ اورپیپلز پارٹی اس وقت اچھا کام کررہی ہے، شکر ہے کہ فرینڈلی اپوزیشن کا خاتمہ ہوگیا ہے، سیدھے راستے پر آنے والے کی ہمیں حمایت کرنی چاہئیے۔

 خواجہ آصف کیخلاف عدالت سے رجوع کریں گے

کبھی ایسا سنا ہے کہ وزیراعظم اقامہ لے کر بیٹھا ہوا ہے؟ لیگی وزرا بھی اقامے لےکر بیٹھے ہوئے ہیں، یہ لوگ لوٹ مار کا پیسہ بچانے کیلئےدین کے پیچھے چھپنے کی کوشش کرتے ہیں، اقامہ کے معاملے پر خواجہ آصف کیخلاف عدالت جارہے ہیں، اس حوالے سے عثمان ڈار اور فردوس عاشق اعوان تیاریوں میں مصروف ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ایک شخص اوربھی ہے جو پیسہ بچانےکیلئے دین کے پیچھے چھپتا ہے، نوازشریف کو گاڈفادر کہنے پرجسٹس عظمت سعید کھوسہ کو سلام پیش کرتا ہوں۔

عمران خان کا کہنا تھا کہ میں اگر نااہل ہوبھی جاؤں تو مافیا سےنجات دلانے کیلئےیہ بہت چھوٹی قیمت ہے، لیکن نوازشریف نااہلی سےنہیں بچ سکتے، نوازشریف کے نااہل ہونے پرجشن تاریخ میں لکھا جائیگا۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں