The news is by your side.

عمران خان نے پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافہ مسترد کردیا

اسلام : پاکستان تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان نے پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافہ مسترد کردیا اور کہا کہ کتنے شرم کا مقام ہے حکومت طاقتور طبقے سے تو ٹیکس لے نہیں رہی، الٹا شریفوں کو منی لانڈرنگ کی کھلی چھوٹ دےرکھی ہے۔

تفصیلات کے مطابق پی ٹی آئی چیئرمین عمران خان نے نے پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافہ مسترد کرتے ہوئے وزیراعظم کی جانب سے اضافے کی سمری منظور کرنے پر شدید تنقید کی۔

عمران خان کا کہنا تھا کہ حکومت نےعوام پرٹیکسزکابوجھ بڑھانےکی ایک اور کوشش کی ہے، کتنے شرم کا مقام ہے حکومت طاقتور طبقے سے تو ٹیکس لےنہیں رہی، حکومت نے الٹا شریفوں کو منی لانڈرنگ کی کھلی چھوٹ دےرکھی ہے۔

انھوں نے مزید کہا کہ شریف اور اس قماش کے لوگوں کو قومی وسائل لوٹنے کی کھلی چھوٹ ہے۔


مزید پڑھیں : حکومت نے ایک بارپھرعوام پرپیٹرول بم گرا دیا


یاد رہے کہ حکومت نے پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافے کرتے ہوئے پیٹرول 3.56 ، ڈیزل 6.94 پیسے اور مٹی کا تیل 6.28 پیسے مہنگا کردیا تھا، جس کے بعد پیٹرول کی ایک لیٹر قیمت اٹھاسی روپے سے زائد ہوگئی۔

پیٹرول کی نئی قیمت 88.07 پیسے تک جاپہنچی۔ لائٹ ڈیزل کی قیمت ایک روپے کے اضافے کے ساتھ 65 روپے 30 پیسے مقرر کر دی گئی ہے، نئی قیمتوں کا اطلاق آج رات 12 بجے سے ہوگا۔

یاد رہے کہ عالمی منڈی میں خام تیل کی قیمتوں میں اضافے کے سبب آئندہ ماہ کے لیے آئل اینڈ گیس ریگولیٹری اتھارٹی (اوگرا) کی جانب سے گزشتہ روز پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافے کے لئے سمری وزارت پٹرولیم کوارسال کی گئی تھی۔

واضح رہے کہ پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں ہونے والے ہوشربا اضافہ کا براہ راست اثر ٹرانسپورٹ کے کرایوں اور اشیائے خورد ونوش کی قیمتوں پر پڑے گا۔

دوسری جانب وفاقی ادارہ شماریات کے ڈائریکٹر جنرل پرائسز عتیق الرحمٰن نے افراط زر پر بریفنگ دیتے ہوئے کہا ہے کہ فروری 2018 کے دوران مہنگائی کی شرح میں 0.31 فیصد کمی ہوئی۔بریفنگ میں بتایا گیا کہ فروری2017 کے مقابلے میں فروری 2018 میں مہنگائی کی شرح 3.80 فیصد ریکارڈ ہوئی۔ جولائی تا فروری 18-2017 مہنگائی کی شرح 3.84 فیصد ریکارڈ کی گئی۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں، مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہچانےکے لیے سوشل میڈیا پر شیئر کریں۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں