The news is by your side.

Advertisement

عمران خان نے نیوزگیٹ اسکینڈل پر قائم تحقیقاتی کمیٹی کومسترد کردیا

اسلام آباد : تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان نے نیوز گیٹ اسکینڈل پر قائم تحقیقاتی کمیٹی کو مسترد کر دیا، عمران خان نے مؤقف اختیار کیا کہ کمیٹی کے سربراہ جسٹس عامر رضا کے شریف خاندان کے ساتھ قریبی مراسم ہیں۔

تفصیلات کے مطابق اسلام آباد میں پی ٹی آئی کے اہم اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے عمران خان نے الزام لگایا کہ جسٹس عامر رضا ن لیگ کیجانب سے نگراں وزیراعلیٰ کے امیدوار بھی تھے۔

انکا کہنا تھا کہ عامر رضا کی بطور سربراہ تعیناتی آزادانہ اور شفاف تحقیقات پر سوالیہ نشان ہے، عمران خان نے خبر لیک کرنے کے معاملے کو سول ملٹری تعلقات خراب کرنیکی سازش قرار دیتے ہوئے کہا کہ پلانٹڈ خبر قومی سلامتی پرحملہ تھا۔

عمران خان کا کہنا تھا کہ پاکستان میں ریٹائرڈ ججز کے ذریعے کمیشن کا قیام سرد خانے میں ڈالنے کے مترادف ہے، انہوں نے سپریم کورٹ کے سنیئر جج کی سربراہی میں کمیشن کے قیام کا مطالبہ بھی کیا۔

انہوں نے کہا کہ خبر ایسے موقع پر لیک کی گئی جب بھارت لائن آف کنٹرول پر جارحیت کر رہا ہے۔

پی ٹی آئی چیئرمین نے کہا کہ معاملے کی انکوائری کے لیے مدت کا تعین کیا جائے، چوہدری نثار نے دعویٰ کیا تھا کہ انکو معلوم ہے خبر کہاں سے اور کیسے لیک ہوئی، اگر ثبوت ہیں تو کمیٹی کے قیام کی کیا ضرورت ہے۔


مزید پڑھیں : قومی سلامتی کی خبر: جسٹس عامر رضا تحقیقاتی کمیٹی کے سربراہ مقرر


اس سے قبل متنازعہ خبر کی تحقیقات کے لیے کمیٹی کا قیام لاہور ہائی کورٹ میں چیلنج کر دیا گیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق سکیورٹی لیکس کی انکوائری کیلئے کمیٹی کا قیام لاہور ہائیکورٹ میں چیلنج کر دیا گیا، کمیٹی کے قیام کے خلاف درخواستیں عوامی تحریک کے اشتیاق چوہدری اور بیرسٹر جاوید اقبال جعفری نے دائر کیں۔


مزید پڑھیں :متنازعہ خبر کی تحقیقات کے لیے کمیٹی کا قیام لاہور ہائی کورٹ میں چیلنج


یاد رہے گزشتہ روز قومی سلامتی سے متعلق خبر لیک ہونے کی تحقیقات کرنے کے لیے حکومت کی جانب سے کمیٹی کے اراکین کے ناموں کا اعلان کیا گیا تھا، جس کے مطابق جسٹس ریٹائرڈ عامر خان رضا کمیٹی سربراہی کریں گے۔

جب کہ کمیٹی میں حساس اداروں آئی ایس آئی ،آئی بی اور ایم آئی سے تعلق رکھنے والے ایک ایک افسر کو بھی کمیٹی میں شامل کیا جائے گا جو کہ انٹیلی جنس کی بنیاد پر تحقیقات میں معاونت کریں گے اور کمیٹی کو حقائق پیش کریں گے۔

اس کے علاوہ کمیٹی میں سیکریٹری اسٹیبلشمنٹ طاہر شہباز، ڈائریکٹر ایف آئی اے عثمان انور ، اور محتسب اعلیٰ پنجاب نجم سعید بھی بہ طور رکنِ کمیٹی خدمات انجام دیں گے اور حساس نوعیت کے معاملے پر اپنی پیشہ ورانہ تجاویز اور رائے دیں گے۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں