The news is by your side.

Advertisement

”کل کے احتجاج میں آئندہ کے لائحہ عمل کا فیصلہ کریں گے“

پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین اور سابق وزیر اعظم عمران خان کا کہنا ہے کہ کل ملک بھر میں مہنگائی کے خلاف ہونے والے احتجاج میں آئندہ کے لائحہ عمل کا فیصلہ قوم کے ساتھ ملکر کریں گے۔

چیئرمین پی ٹی آئی عمران خان نے کہا کہ لٹیروں نے اپنی تجوریاں بچنے کے لیے ملک گروی رکھ کر مہنگائی کا عذاب نازل کر دیا، جائیدادیں باہر رکھنے والوں کو عوام کی مشکلات اور ملک کے مستقبل کی فکر نہیں۔

عمران خان نے کہا کہ تحریک انصاف اپنے لوگوں پر دن دیہاڑے ظلم برداشت نہیں کرے گی اور کل کے احتجاج میں قوم کے ساتھ مل کر آئندہ کے لائحہ عمل کا فیصلہ کریں گے۔

سابق وزیر اعظم نے کہا کہ ظالم جبر سے عوام کو اپنے حق کے لیے آواز بلند کرنے سے نہیں روک سکتے، 2 ماہ کے واقعات نے سازش کے ہر کردار اس کے اہداف پوری طرح آشکار کیے۔

انہوں نے کہا کہ حکومت پر قابض لشکر اپنی چوری بچانے کے لیے قوم کا مستقبل داؤ پر لگا رہا ہے، خود کو اقتدار میں رکھنے کے لیے اداروں کو بدترین تباہی سے دوچار کیا جا رہا ہے، تنبیہ کی تھی کہ سنبھلتی معیشت کو عدم استحکام سے دوچار کیا گیا تو حالات بے قابو ہوں گے۔

ان خیالات کا اظہار چیئرمین پی ٹی آئی نے اپنی زیرِ صدارت ہونے والے پارٹی ترجمانوں کے اجلاس میں کیا جس میں فیٹف رابطہ کمیٹی کے اراکین اور افسران کو خراج تحسین پیش کیا گیا۔ اجلاس میں امپورٹڈ سرکار کی معیشت تباہی اور عوام پر مہنگائی کا عذاب مسلط کرنے اور مہنگائی میں اضافے کے لیے ملک گیر احتجاج کی کال پر تبادلہ خیال کیا گیا۔

اجلاس میں سازش سے اقتدار کا راستہ بنانے والوں کی جانب سے معیشت کی تباہی کا تفصیلی جائزہ لیا گیا۔ عوامی تائید و ساکھ سے محروم حکومت کے دوست ممالک سے روا رکھی جانے والی سرد مہری کا بھی تجزیہ کیا گیا۔

سوشل میڈیا پر شہریوں کو ہراساں کیے جانے کی شدید مذمت کی گئی۔ نالائق، بے حس اور ظالم حکومت کی جانب سے اداروں کی تباہی، کراچی میں ضمنی الیکشن میں عوام کی مکمل لاتعلقی اور ای سی کی ناکامی پر گہری تشویش کا اظہار کیا گیا۔

امپورٹڈ حکومت کی جانب سے قبائلی اضلاع کے بجٹ میں 21 ارب کی کٹوتی کی مذمت کی گئی۔ قبائلی اضلاع کے 50 لاکھ شہریوں کو صحت کارڈ سے محروم کرنے کی اطلاعات پر تشویش کا اظہار کیا گیا جب کہ فاٹا انضمام کو رول بیک کرنے کی سازش کا جائزہ ایسی ہر کوشش کی بھرپور مزاحمت کا فیصلہ کیا گیا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں