The news is by your side.

Advertisement

اللہ کاشکرگزارہوں، سپریم کورٹ کافیصلہ تسلیم کرتےہیں،عمران خان

کراچی : پاکستان تحریک انصاف کے سربراہ عمران کا کہنا ہے کہ اللہ کاشکرگزارہوں، سپریم کورٹ کا فیصلہ تسلیم کرتے ہیں،جہانگیر ترین کو نااہل قرار دینے پر بہت افسوس ہوا،جہانگیر ترین سب سےزیادہ ٹیکس دینےوالے بزنس مین ہیں۔

تفصیلات کے مطابق سپریم کورٹ کی جانب سے نااہلی کیس کا فیصلہ آنے کے بعد پی ٹی آئی چیئرمین عمران خان نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ اللہ کاشکرگزارہوں، سپریم کورٹ میں ایک سال میرےخلاف کیس چلا، میرےخلاف ایک منشیات فروش نےکیس کیا، ایفی ڈرین کوٹہ کیس کے ملزم نے میرے خلاف درخواست دی۔

عمران خان کا کہنا تھا کہ منی لانڈرنوازریف کوشایدمیرےخلاف کوئی اورنہیں ملا، سپریم کورٹ میں اپنےاثاثوں کےتمام ثبوت جمع کرائے، 300 ارب کی منی لانڈرنگ کرنےوالےایک دستاویزجمع کرائی، نوازشریف نےبطورثبوت قطری خط دیاوہ بھی جھوٹا، ایک سال میں موازنہ ہوامیں باہرسےکماکرلایااوریہ باہر لے گئے۔

جہانگیر ترین کے نااہلی کے فیصلے کے حوالے سے سربراہ تحریک انصاف نے کہا جہانگیرترین کےخلاف فیصلہ آنےپرافسوس ہواہے، جہانگیر ترین کو نااہل قرار دینے پر بہت افسوس ہوا، جہانگیرترین سب سےزیادہ ٹیکس دینے والے بزنس مین ہیں۔

انکا کہنا تھا کہ سپریم کورٹ کافیصلہ تسلیم کرتےہیں، سپریم کورٹ نےفیصلہ تکنیکی بنیادپرکیانظرثانی اپیل کرینگے، جہانگیرترین کا موازنہ ان ڈاکوؤں سے نہ کیا جائے۔

چیئرمین پی ٹی آئی نے مزید کہا کہ خوشی ہےپاکستان کی خدمت کرنےکاموقع ملا ہے، خوشی ہےمیں نےتلاشی دی اور سرخرو ہوا، لوگ مجھ پر اعتماد کرتے ہیں اسپتال کیلئے پیسےدیتےہیں، خوشی ہے اب میں کھل کر لوگوں کے سامنے آگیا ہوں۔

حدیبیہ کیس کے حوالے سے عمران خان کا کہنا تھا کہ حدیبیہ کیس تکنیکی بنیادوں پرخارج ہوا،نیب نےکمزورجواب دیا، نیب حدیبیہ کیس میں سپریم کورٹ میں درست نہیں لڑی۔

یاد رہے کہ سپریم کورٹ نے بڑا فیصلہ سناتے ہوئے پی ٹی آئی کے چئیر مین عمران خان اہل جبکہ جنرل سیکریٹری جہانگیر ترین نااہل قرار دیا۔


مزید پڑھیں :  نا اہلی کیس: عمران خان بری/ جہانگیر ترین نا اہل قرار


جہانگیرترین کے خلاف نااہلی کی درخواست قابل سماعت قرار دیتے ہوئے کہا تھا کہ جہانگیرترین نے50کروڑروپےبیرون ملک منتقل کیے، آف شورکمپنیاں جہانگیرترین کی ملکیت ہیں، جہانگیرترین پرآرٹیکل62ون ایف کااطلاق ہوتاہے، بینفیشل مالک پرجہانگیرترین کاجواب واضح نہیں تھا، جہانگیرترین نےاثاثےچھپائے،صادق اورامین نہیں رہے۔

سپریم کورٹ نے الیکشن کمیشن کوجہانگیرترین کی نااہلی کانوٹیفکیشن جاری کرنے کی ہدایت کردی۔


اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی وال پر شیئر کریں۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں