The news is by your side.

Advertisement

بھارت : آسام میں مسلمانوں پر تشدد، عرب ممالک میں نئی مہم کا آغاز

بھارتی ریاست آسام میں مسلمانوں پر ہونے والے مظالم پر مشرق وسطیٰ میں شدید تشویش پائی جارہی ہے، اس سلسلے میں لوگ احتجاجاً بھارتی مصنوعات کا بائیکاٹ کررہے ہیں۔

خطے کے متعدد ممالک میں بھارتی مصنوعات کے بائیکاٹ کی مہم سماجی رابطوں کی ویب سائٹس پر پوری شدت کے ساتھ جاری ہے، مذکورہ مہم عوام کی جانب سے چلائی جارہی ہے۔

اس ضمن میں عرب ذرائع ابلاغ کا کہنا ہے کہ مشرق وسطیٰ کے ممالک میں مقیم افراد میں اس بات پر سخت غم و غصہ پایا جا رہا ہے کہ آسام پولیس کی جانب سے مسلمانوں کی بیدخلی کے لیے چلائی جانے والی مہم کے دوران انتہا درجے کا ظلم و تشدد کیا جا رہا ہے۔

گزشتہ دنوں سماجی رابطوں کی ویب سائٹس پر ایک ویڈیو وائرل ہوئی تھی جس میں دیکھا جا سکتا ہے کہ آسام پولیس نے کس طرح ایک مسلمان کو نہ صرف گولی ماری بلکہ آسام حکومت کا فوٹو گرافر پوری قوت سے مارے جانے والے مسلمان کی نعش کو ٹھوکریں مارتا رہا تھا۔

مڈل ایسٹ مانیٹر کے مطابق کویت کی قومی اسمبلی کے اراکین نے بھارتی حکام اور انتہا پسند گروپوں کی جانب سے مسلمانوں پر ڈھائے جانے والے مظالم کی سخت مذمت کی تھی۔

Boycott_Indian_Products trends in Arab world after Assam killings, netizens  condemn 'growing violence against Muslims' | Free Press Kashmir

کویت کے قانون سازوں کی جانب سے 30 ستمبر کو کہا گیا تھا کہ بھارتی مسلمانوں کے خلاف تشدد اور امتیازی سلوک بشمول قتل ، نقل مکانی اور جلانے کی لہر کے تناظر میں کویت کے اراکین اسمبلی بھارتی مسلمانوں کے ساتھ کھڑے ہیں۔

کویت کے اراکین نے اس حوالے سے عالمی اداروں کی توجہ بھی مبذول کرائی تھی جب کہ کویتی رکن پارلیمان شعیب المعظیری نے بھارتی اشیا کے بائیکاٹ کا مطالبہ کیا تھا۔

عمان کے مفتی اعظم شیخ احمد الخیلی جو ملک کے بااثر ترین علما میں سے ایک ہیں، نے 28 ستمبر کو ہندوستان میں مسلمانوں کے خلاف تشدد کے بارے میں ٹوئٹ کیا تھا۔

شیخ احمد الخیلی نے کہا تھا کہ میں انسانیت کے نام پر تمام امن پسند ممالک سے اپیل کرتا ہوں کہ وہ اس جارحیت کو روکنے کے لیے مداخلت کریں۔ انہوں نے اپنے سرکاری ہینڈل سے عربی میں ایک پوسٹ بھی ٹوئٹ کی جس میں بین الاقوامی مداخلت کی درخواست کی گئی تھی۔

عرب میڈیا کے مطابق اس صورتحال میں ہیش ٹیگ بھارت مسلمانوں کو قتل کرتا ہے عرب ممالک میں ٹرینڈ کر رہا ہے جس میں بھارت پر نسل کشی کا الزام لگایا گیا ہے۔

اسلا مو فوبیا کے مصنف اور محقق خالد بیدون نے اسے ریاست کے زیر اہتمام اسلاموفوبیا اور ہندوتوا تشدد قرار دیا ہے۔ اسلامی تعلیمی، سائنسی اور ثقافتی تنظیم ئیسکو کے سابق ڈائریکٹر اے التویجری نے ٹوئٹ میں کہا ہے کہ نریندر مودی کی ہندو حکومت ایک منظم پالیسی کے تحت اور بین الاقوامی خاموشی میں مسلمانوں پر مظالم ڈھا رہی ہے اور انہیں قتل کر رہی ہے۔

عرب ذرائع ابلاغ کے مطابق عبدالرحمان النصر جن کے ٹوئٹر پر تین لاکھ 18 ہزار سے زائد فالوورز ہیں نے درنگ میں تشدد کی وائرل ویڈیو کو ٹویٹ کیا اور کہا کہ خلیج میں 30 لاکھ سے زیادہ ہندو ہیں جو ہندوستان میں اربوں ڈالرز بھیجتے ہیں لیکن ہم ان کے ساتھ احترام کا سلوک کرتے ہیں تو وہ بھارت میں کیوں ہمارے بھائیوں کو صرف اس لیے مارا جار ہا ہے کہ وہ مسلمان ہیں؟

Comments

یہ بھی پڑھیں