The news is by your side.

Advertisement

بھارت مسئلہ کشمیر کو دوطرفہ کہہ کر امریکا اور عالمی برادری سے فریب کررہا ہے، شاہ محمود

نیویارک: وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی کا کہنا ہے کہ وزیراعظم عمران خان نے امریکی صدر کو مسئلہ کشمیر سے آگاہ کیا جس پر امریکی صدر نے کہا ساری باتیں مودی سے کروں گا، ٹرمپ نے مودی سے ساری باتیں بھی کیں لیکن مودی نے امریکی صدر کو کہا کہ یہ ہمارا آپس کا معاملہ ہے۔

شاہ محمودقریشی کا اے آر وائی نیوز کے پروگرام پاور پلے میں خصوصی گفتگو کرتے ہوئے واضح طور پر کہا کہ کشمیر کا مسئلہ دوطرفہ نہیں ہے، بھارت دوطرفہ کہہ کر امریکا کو دھوکا اور عالمی برادری سے فریب کررہا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ سویت یونین کیخلاف امریکا سمیت دیگر ممالک نے مل کر لوگوں کو تربیت دی، اس وقت بھارتی حکومت بے پناہ اخلاقی دباؤ میں ہے، نیویارک میں موجود تمام ہیومن رائٹس باڈی بھارت پر تنقید کررہی ہے، عالمی ادارے، عالمی میڈیا بھارتی کردار سے پردہ اٹھا رہے ہیں۔

وزیرخارجہ نے کہا کہ بہت سے ممالک بھارتی مؤقف کی حمایت نہیں کررہے، بھارت پاکستان کیخلاف پروپیگنڈا کرنے کی کوشش کررہا ہے، بھارتی پروپیگنڈے سے دنیا آج اختلاف کررہی ہے، بھارت تو کشمیریوں کو بھی دہشت گرد کے طور پر پیش کرنےکی کوشش کررہاہے، کیاحق خودارادیت مانگنا دہشت گردی ہے۔

مقبوضہ کشمیر: بھارتی اقدام واپس لیے بغیر مودی سے ملاقات کا امکان نہیں، عمران خان

انہوں نے بتایا کہ سیکیورٹی کونسل میں چین کی مدد سے آئے تھے، ہیومن رائٹس کونسل میں جانے کا مقصد بھارت کا چہرہ بے نقاب کرناتھا، ہیومن رائٹس کونسل میں قرارداد لانے کا فیصلہ نہیں کیا تھا، 1994 میں بھی اس وقت کے حالت میں ہمارے ساتھ کوئی کھڑا نہیں ہوا تھا۔

شاہ محمود کا مزید کہنا تھا کہ کوئی فیصلہ عجلت میں نہیں کرنا چاہتے، تمام کارڈ آہستہ آہستہ شو کریں گے، ہیومن رائٹس کونسل کا اجلاس27ستمبر تک چل رہا ہے، کونسل کے سال میں3اجلاس ہوتے اس میں کبھی بھی جاسکتے ہیں، بردباری سے کام کریں گے، بھارت کو پروپیگنڈا سے کچھ نہیں ملے گا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں