site
stats
عالمی خبریں

بھارت ایشیاء کا کرپٹ ترین ملک قرار

نیویارک : بھارت کو ایشیاء میں کرپٹ ترین ملک قرار دے دیا گیا ہے۔

ٹرانسپرنسی انٹر نیشل نے مودی سرکار کے شائننگ انڈیا کے نعرہ کا پول کھول دیا، کرپشن کے خلاف کام کرنے والے ادارے ٹرانسپرنسی انٹر نیشل کی تازہ رپورٹ کے مطابق ایشیائی ممالک میں کرپشن کے لحاظ سے بھارت پہلے نمبر ہے۔

ٹرانسپرنسی انٹر نیشنل کا کہنا ہے کے رشوت خوری میں بھارت نے پورے ایشیاء کو پیچھے چھوڑ دیا ہے، اسکول ہو یا اسپتال، آئی ڈی کارڈ بنوانا ہو یا پولیس کی مدد درکار ہو، مودی سرکار کے بھارت میں ہر کام کیلئے رشوت دینی پڑتی ہے۔

بھارت میں آدھی سے زیادہ آبادی کا کہنا ہے کہ رشوت کے بغیر کوئی کام نہیں ہوتا۔


ہر 10 میں سے 7 بھارتی رشوت دینے پر مجبور


ٹرانسپرنسی انٹرنیشل کے سروے کے مطابق مودی سرکارکے دورمیں کرپشن میں بے پناہ اضافہ ہواہے، عوامی سہولیات و خدمات کے بھارتی سرکاری شعبوں میں رشوت خوری کا تناسب تقریباً 70 فیصد ہے، یعنی ہر 10 بھارتیوں میں سے 7 کو سرکاری محکموں سے کام نکلوانے کے لیے رشوت دینا پڑتی ہے جب کہ بھارتی سرکاری اہلکار مالداروں کی نسبت غریبوں سے زبردستی اور زیادہ رشوت وصول کرتے ہیں۔

تنظیم کے ترجمان کے مطابق جو رشوت دینے کی سکت نہیں رکھتے وہ قانون، تعلیم اورصحت کے شعبوں تک رسائی بھی نہیں رکھ سکتے۔ بھارت میں تعلیم میں اٹھاون جبکہ صحت کے شعبے میں انسٹھ فیصد کرپشن بڑھی ہے.

فوربر میگزین نے بھی بھارت کو رشوت کا گیہوار قرار دیا ہے، فورنز میگرین کےمطابق بھارت میں رشوت کی شرح انہتر فیصد ہے۔


مزید پڑھیں : بھارت دنیا کے کرپٹ ترین ممالک میں شامل


اس سے قبل بھی امریکی محکمہ خارجہ نے انکشاف کیا تھا کہ ٹریڈ بیسڈ منی لانڈرنگ میں بھارت چوتھے نمبر پر ہے، سالانہ اکیاون ارب ڈالر کی منی لانڈرنگ ہوتی ہے۔

ترقی کی منازل طے کرنے کے دعوے دار بھارت کی بیشتر عوام کے پاس ابھی تک بینکنگ کی سہولت موجود نہیں، جس کے باعث کالے دھن کی نقل و حمل انتہائی آسان ہے جبکہ بھارت میں موجود منظم جرائم پیشہ تنظیموں کے روابطہ دیگر ممالک سے بھی ہیں جو کہ ٹریڈ بیسڈ منی لانڈرنگ میں استعمال ہوتے ہیں۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top