The news is by your side.

Advertisement

بھارت میں مدارس کے ہزاروں اساتذہ کی زندگی اجیرن، سراپا احتجاج

کولکتہ : گزشتہ35 دنوں سے احتجاج کرنے والے مدرسہ کے اساتذہ نے کولکتہ ہائی کورٹ میں درخواست دائر کرکے تنخواہ دینے یا خودکشی کی اجازت دینے کا مطالبہ کیا ہے۔

بھارت میں تنخواہ اور سرکاری سہولیات کے مطالبہ کرتے ہوئے گذشتہ35 دنوں سے مدرسہ اساتذہ کی جانب سے ریاستی حکومت کے خلاف شدید احتجاج کیا جارہا ہے۔

اس حوالے سے اساتذہ نے میڈیا کو بتایا کہ نو سال سے 235 مدارس کے ڈھائی ہزار اساتذہ کی جانب سے حکومت سے تنخواہ اور دوپہر کے کھانے جیسی سرکاری سہولیات فراہم کرنے کا مطالبہ کیا جارہا ہے لیکن ریاست کی جانب سے اس سلسلے اب تک کوئی اقدام نہیں کیا گیا۔

یاد رہے کہ مدارس کے ڈھائی ہزار اساتذہ نے گزشتہ 35 دنوں سے کولکتہ محکمہ تعلیم کے دفتر کے سامنے دھرنا دیا ہوا ہے لیکن تاحال حکومت نے ان کے کسی بھی مطالبے پر کوئی جواب نہیں دیا ہے۔

اس ضمن اساتذہ نے میڈیا کو بتایا کہ آج کلکتہ ہائی کورٹ میں اساتذہ کی جانب سے ایک عرضی دائر کی گئی ہے جس میں عدالت سے تنخواہ دینے یا خودکشی کرنے کی اجازت مانگی گئی یا تمام اساتذہ کو زندگی بھر کے لئے جیل میں ڈالنے کا مطالبہ کیا گیا ہے تاکہ کم سے کم ہمیں دو وقت کا کھانا نصیب ہوسکے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں