بھارت، ہندو اساتذہ کا مسلمان طالب علموں کے ساتھ امتیازی سلوک India
The news is by your side.

Advertisement

بھارت، ہندو اساتذہ کا مسلمان طالب علموں کے ساتھ امتیازی سلوک

نئی دہلی : بھارت نے نفرت آمیز رویے کی تمام حدوں کو پار کرتے ہوئے اب مسلمان طالب علموں کو بھی ہدف بنایا ہوا ہے اور ہندو اساتذہ اپنے مسلمان شاگردوں سے تضحیک آمیز اور انتہا پسندانہ سوالات پوچھتے ہیں.

اس بات کا انکشاف بھارتی اخبار ہندوستان ٹائمز میں شائع ہونے والی رپورٹ میں کیا گیا ہے جس کے تحت ہندو اساتذہ مسلمان طالب علموں سے ایسے سوالات پوچھتے ہیں جیسے وہ معصوم طلبا کسی بڑی دہشت گردی کے واقعے میں ملوث ہوں.

بھارتی اخبار کی رپورٹ کے مطابق دہلی کے ایک اسکول میں یہ شکایات سامنے آئی ہیں کہ ہندو ٹیچرز نے دوران تدریس بم دھماکوں میں مسلمانوں کے ملوث ہونے کا ذکر کرتے ہوئے مسلمان طلباء سے پوچھا کہ کیا آپ کے والد بم بناتے ہیں ؟

ذرائع کے مطابق اسکول کے ذہین ترین مسلمان طالب علم سعد نے بتایا کہ ہندو اساتذہ ہر بڑے حادثے یا سانحے کے بعد ایسا ظاہر کرتے ہیں کہ جیسے یہ سراسر مسلمانوں کا کام ہے اور سارے مسلمان طالبان ہیں.

طالب علم کا کہنا تھا کہ ہم سے کلاس میں امتیازی سلوک برتا جاتا ہے اور ایسے چھبتے ہوئے سوالات کیے جاتے ہیں جیسے ہم لوگ دہشت گرد ہوں اور یہاں تعلیم حاصل کرنے نہیں بلکہ دھماکے کرنے آئے ہیں.

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں