The news is by your side.

Advertisement

بھارتی آرمی چیف نے مقبوضہ کشمیر میں ناکامی کا اعتراف کرلیا

جتنے نوجوان مارتے ہیں، ان سے زیادہ تحریکِ آزادی میں شامل ہو جاتے ہیں، اب امن کو بھی ایک موقع دینا چاہے: بپن راوت

نئی دہلی: بھارتی آرمی چیف نے مقبوضہ کشمیر میں ناکامی کا اعتراف کرلیا، جتنے نوجوان مارتے ہیں، ان سے زیادہ تحریکِ آزادی میں شامل ہو جاتے ہیں۔

بھارتی آرمی چیف جنرل بپن راوت نے دی اکانومک ٹائمز کو انٹرویو دیتے ہوئے کہا کہ وہ مقبوضہ کشمیر کے مسئلے کے حل کے لیے مذاکرات کی حمایت کرتے ہیں، انھوں نے کہا کہ کشمیر میں امن کو ایک موقع دینا چاہیے۔

انھوں نے کھل کر اعتراف کیا کہ ہم کشمیر میں انھیں مار رہے ہیں اور ان کی تعداد میں مزید اضافہ ہوتا ہے، ان کا اشارہ مقبوضہ کشمیر میں جاری تحریک آزادی کی طرف تھا۔

بھارتی آرمی چیف نے کہا کہ در اندازی کو تو روکا جاسکتا ہے لیکن مقامی نوجوانوں کو تحریک آزادی میں بھرتی کیے جانے کا سلسلہ دراز ہی ہوتا جارہا ہے، اس لیے امن کو ایک موقع دینا چاہیے اور پھر دیکھتے ہیں کہ کیا ہوتا ہے۔

بھارت مقبوضہ کشمیر پر غیر قانونی قبضہ ختم کرے: دفتر خارجہ


مقبوضہ کشمیر میں جیپ کے آگے ایک کشمیری کو باندھ کر چلنے والے واقعے کے حوالے سے انھوں نے کہا کہ اس سلسلے میں انکوائری جاری ہے، اگر جرم ثابت ہوتا ہے تو بھارتی میجر لیتل گوگوئی کو سخت ترین سزا دی جائے گی۔

مشال ملک کا رد عمل


دوسری طرف حریت رہنما مشال ملک نے مقبوضہ کشمیر سے متعلق بھارتی آرمی چیف کے بیان پر رد عمل دیتے ہوئے کہا ہے کہ یہ ہماری تحریک کی قوت کا اعتراف ہے۔

میں اور میرا شوہر کشمیر میں ہونے والے مظالم کی زندہ مثال ہیں، مشال ملک


مشال ملک نے اپنے بیان میں کہا کہ بھارتی فوج کے سربراہ نے مقبوضہ کشمیر کے معاملے پر ہار مان لی ہے، وہ ہمارے نوجوانوں کی تحریک آزادی کے آگے ہمت ہار گئے ہیں۔

خاتون کشمیری حریت رہنما کا کہنا تھا کہ بھارتی آرمی چیف نے تحریک آزادی میں شدت کا اعتراف کیا ہے، انھوں نے تسلیم کیا کہ قتل عام سے تحریک زور پکڑ رہی ہے۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں، مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچانے کےلیے سوشل میڈیا پرشیئر کریں۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں