The news is by your side.

Advertisement

بھارتی وزیر خارجہ کی بدحواسی، امریکی کانگریس اراکین سے ملاقات منسوخ کر دی

امریکی اراکین کانگریس کی کڑی تنقید، بھارتی حکومت سے ایسے رویے کی امید نہیں: برنی سینڈرز

واشنگٹن: مودی سرکار تنقید پر آپے سے باہر ہو گئی، بھارتی وزیر خارجہ نے بد حواس ہو کر کشمیر پر کانگریس اراکین کے ساتھ ملاقات منسوخ کر دی۔

تفصیلات کے مطابق دورۂ واشنگٹن میں بھارتی وزیر خارجہ سبرامینم جے شنکر کی اراکین کانگریس سے ملاقات طے تھی، امریکی میڈیا کا کہنا ہے کہ جے شنکر نے کانگریس رکن پرامیلا جیا پال کو ملاقات میں شامل نہ کرنے کا مطالبہ کیا تھا۔ جیا پال نے گزشتہ ہفتے کشمیر پر کانگریس میں قرارداد پیش کی تھی۔

امریکی میڈیا کے مطابق بھارتی وزیر خارجہ کی امور خارجہ کمیٹی کے سربراہ سے ملاقات طے تھی، ملاقات کے لیے وفد میں مائیکل میک کال، جیا پال اور دیگر اراکین کانگریس شامل کیے گئے تھے، تاہم بھارتی وزیر خارجہ کا اصرار تھا کہ جیا پال کو وفد میں شامل نہ کیا جائے۔

یہ بھی پڑھیں:  بھارتی خاتون نے امریکی ایوان میں مقبوضہ کشمیر پر بل پیش کر دیا

امریکی اراکین کانگریس کے انکار کے بعد وزیر خارجہ بھارت نے ملاقات منسوخ کر دی، جس پر امریکی اراکین کانگریس نے کڑی تنقید کی۔ سینیٹر برنی سینڈرز نے کانگریس وومن جیا پال کی حمایت میں بیان جاری کرتے ہوئے کہا انسانی حقوق پر امریکی کانگریس اراکین کو خاموش نہیں کرایا جا سکتا، بھارتی حکومت سے ایسے رویے کی امید نہیں کرتے۔ دریں اثنا، برنی سینڈرز نے کشمیر پر کانگریس وومن پرامیلا جیا پال کا بیان بھی درست قرار دے دیا۔

دوسری طرف پرامیلا جیا پال نے رد عمل میں کہا کہ کشمیر پر بھارتی وزیر خارجہ نے ملاقات منسوخ کر کے مایوس کیا، بھارتی وزیر خارجہ کا رویہ ظاہر کرتا ہے کہ وہ کشمیر پر کچھ سننا نہیں چاہتے، بھارت کانگریس کے وفد کو حکم نامے جاری نہیں کر سکتا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں