The news is by your side.

Advertisement

بھارتی اسکول میں پرنسپل نے مسلم طالب علم کو ہندو اشلوک پڑھنے پرمجبورکردیا

بنگلور: بھارت میں ایک 15 سالہ مسلم اسکول طالب علم سمیت دیگرمسلم طلبہ کو انتظامیہ نے ہندو مذہب کے اشلوک پڑھنے پرمجبور کردیا۔

بھارتی اخبار کے مطابق ایک نجی اسکول نے رواں سال ہی سنسکرت کے کچھ اشلوک اپنی اسمبلی میں شامل کیے ہیں۔ گزشتہ ہفتے اسکول پرنسپل نے دیکھا کہ مسلم طلبہ اشلوک نہیں پڑھ رہے تو ان کو اس بات کی سزادی گئی۔

طالب علم کا کہناتھا کہ انہیں1200 طلبہ و طالبات کے سامنے توہین کا نشانہ بنایا گیا اوراسٹیج پربلا کرزبردستی ہندی اشلوک پڑھوائے گئے ۔ طالب علم نے مزید بتایا کہ جب اس نے کچھ الفاظ کا تلفظ ٹھیک طرح سے ادا نہیں کیا تو اسے اس بات پرسب کے سامنے بری طرح لتاڑا گیا۔

طالب علم کی والدہ نے جب پرنسپل سے اس معاملے کی شکایت کی تو انہوں نے اس معاملے کی سنگینی کا اندازہ کیے بغیرکہا کہ’’بچوں کو نظم وضبط اوراقدارسکھانے کے لئے دعا ضروری ہے‘‘۔

متاثرہ والدہ نے مزید کہا کہ اسکول پرنسپل اس بات کو سمجھنے کی کوشش ہی نہیں کررہیں کہ ہم ایک مختلف عقیدے سے تعلق رکھتے ہیں اور یہ دعائیں ہمارے مذہب کا حصہ نہیں ہیں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں