پاکستانی شہری نے گن پوائنٹ پر نکاح کیا: بھارتی خاتون کا الزام -
The news is by your side.

Advertisement

پاکستانی شہری نے گن پوائنٹ پر نکاح کیا: بھارتی خاتون کا الزام

اسلام آباد: بھارتی شہری ڈاکٹر عظمیٰ اور پاکستانی شخص طاہر علی کی محبت کی کہانی میں نیا موڑ آگیا۔ بھارتی لڑکی نے مبینہ شوہر طاہر پر اغوا اور زیادتی کا الزام لگا کر بھارتی ہائی کمیشن سے دہلی بھیجنے کی درخواست کردی۔ شوہر نے تمام الزامات کو مسترد کردیا۔

تفصیلات کے مطابق نئی دہلی کی رہائشی ڈاکٹر عظمیٰ واہگہ بارڈر کے ذریعے پاکستان پہنچی تھیں اور انہوں نے 3 مئی کو طاہر علی نامی شخص سے شادی کی۔ طاہر صوبہ خیبر پختونخواہ کے شہر بونیر کا رہائشی ہے۔

دو روز قبل وہ اپنے شوہر کے بھارتی ویزے کے لیے بھارتی ہائی کمیشن گئیں جہاں سے وہ منظر سے غائب ہوگئیں۔

مزید پڑھیں: بھارتی خاتون انڈین ہائی کمیشن میں محصور

ان کے شوہر طاہر جو ان کے ساتھ ہی وہاں آئے تھے، کے پوچھنے پر ہائی کمیشن کی انتظامیہ نے خاتون کی موجودگی سے ہی انکار کردیا جس کے بعد طاہر علی نے بھارتی ہائی کمیشن کے خلاف تھانہ سیکریٹریٹ میں درخواست جمع کروا دی۔

تاہم آج صبح بھارتی خاتون منظر عام پر آگئیں اور انہوں نے اپنا بیان بدلتے ہوئے کہا کہ ان سے گن پوائنٹ پر نکاح کروایا گیا۔

ہائی کمیشن میں پناہ لی تھی

ڈاکٹر عظمیٰ نے اسلام آباد کی مقامی عدالت میں درخواست دائر کردی ہے۔

بیان ریکارڈ کروانے کے لیے عدالت پہنچنے پر خاتون نے مبینہ شوہر پر گن پوانئٹ پر نکاح کے ساتھ ساتھ زیادتی اور تشدد کا الزام بھی لگا دیا۔ ان کا کہنا ہے کہ طاہر نشہ آور ادویات دے کر واہگہ بارڈر سے پاکستان لایا۔

ان کے مطابق وہ بہت مشکل سے ہائی کمیشن پہنچی ہیں اور یہاں پہنچ کر انہوں نے پناہ لے لی، اب وہ دہلی جانے تک یہیں رہیں گی۔

ڈاکٹر عظمیٰ نے بھارتی ہائی کمیشن کو پناہ اور بھارت واپس جانے کی درخواست دے دی ہے۔

دوسری جانب طاہر علی نے بھارتی خاتون سے دوستی، محبت اور نکاح تک کی تفصیلات بتاتے ہوئے کہا کہ عظمیٰ سے ملاقات ملائیشیا میں ہوئی تھی۔ 3 مئی کو ان دونوں نے بونیر میں نکاح کیا۔

طاہر کا کہنا ہے کہ وہ اور عظمیٰ 5 مئی کو ویزا درخواست کے لیے بھارتی ہائی کمیشن گئے تو عملے نے عظمیٰ کو روک لیا جس کے بعد اب ان کا یہ بیان سامنے آیا ہے۔


اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی فیس بک وال پر شیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں