The news is by your side.

Advertisement

آئی پی پیز سے متعلق تحقیقاتی رپورٹ کا جائزہ لیا جارہا ہے: شہزاداکبر

اسلام آباد: وزیراعظم کے معاون خصوصی شہزاد اکبر کا کہنا ہے کہ آئی پی پیز سے متعلق رپورٹ وزیراعظم کو پیش کردی گئی ہے، آئی پی پیز کو 5100ارب روپے کی زائد ادائیگیاں کی گئیں۔

اے آر وائی نیوز کے پروگرام پاور پلے میں گفتگو کرتے ہوئے شہزاد اکبر نے کہا کہ آئی پی پیز سے متعلق تحقیقاتی رپورٹ کا جائزہ لیا جارہا ہے، تحقیقاتی رپورٹ تیار کرنے والے اپنی فیلڈ کے ماہر ہیں، کچھ معاہدوں کے ذریعے ریاست کو پھنسا دیا جاتا ہے، جتنی بجلی پیدا ہورہی ہے وہ ہماری ضرورت سے دگنی ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ آئی پی پیز کے معاملے پر 3 میٹنگز ہوچکی ہیں، ندیم بابر کو معاونت کے لیے رکھا گیا ہے، ندیم بابر کی رائے ہے آئی پی پیز تحقیقاتی رپورٹ غلط ہے، رپورٹ توانائی کی کمیٹی کو پیش کردی گئی ہے، اسدعمر کی سربراہی میں کام کرنے والی کمیٹی کو رپورٹ دے دی ہے، ندیم بابر کے پاس ایگزیکٹوپاور نہیں ہے۔

ماضی کی غلط پالیسیاں، بجلی پلانٹس کو 1 ہزار ارب زائد ادائیگیوں کا انکشاف

معاون خصوصی نے کہا کہ رحیم یارخان شوگرمل میں خسروبختیار کے بھائی کا شیئر ہے، پوری دنیا میں انڈسٹریز کے لوگ حکومتی معاونین بنتے ہیں، جو انڈسٹری کو سمجھتا ہے وہی بہتر معاونت کرسکتا ہے۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ 2017-19میں پاورسیکٹر کو بجٹ سے3202ارب کی سپورٹ ملی، معاہدے عمران خان یا تحریک انصاف کی حکومت نے نہیں کیے، معاہدے جن لوگوں اور حکومتوں نے کیے ان سے پوچھنا چاہیے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں