The news is by your side.

Advertisement

کراچی: سرکاری اسپتال میں لڑکی کا قتل، 5 رکنی تحقیقاتی کمیٹی تشکیل

مقدمہ عصمت کے اہل خانہ کی مرضی کے مطابق درج کرایا جائے گا: وزیر بلدیات سندھ

کراچی: کورنگی کے سرکاری اسپتال میں 23 سالہ عصمت کی موت کے معاملے کی تحقیقات کے لیے ایس ایس پی کورنگی کی سربراہی میں 5 رکنی تحقیقاتی کمیٹی تشکیل دے دی گئی۔

تفصیلات کے مطابق کراچی کے علاقے کورنگی میں سرکاری اسپتال میں نوجوان لڑکی کے ساتھ زیادتی کے بعد اسے قتل کرنے کے معاملے پر تحقیقاتی کمیٹی بنا دی گئی ہے۔

سرکاری نوٹیفکیشن کے مطابق پانچ رکنی تحقیقاتی کمیٹی کے سربراہ ایس ایس پی کورنگی ہوں گے، کمیٹی میں ایس ایس پی انویسٹی گیشن، ڈی ایس پی لانڈھی شامل ہیں۔

تحقیقاتی کمیٹی میں ایس ایچ او ابراہیم حیدری اور ایس آئی یو عوامی کالونی کو بھی شامل کیا گیا ہے۔

یہ بھی پڑھیں:  کراچی، سرکاری اسپتال میں زیر علاج 26 سالہ مریضہ زیادتی کے بعد قتل

دریں اثنا، سندھ کے وزیر بلدیات سعید غنی اور مشیر اطلاعات مرتضیٰ وہاب متاثرہ لڑکی عصمت کے گھر گئے، پیپلز پارٹی کے رہنماؤں نے عصمت کے اہلِ خانہ کو ہر ممکن تعاون کی یقین دہانی کرائی۔

وزیر بلدیات سعید غنی نے کہا کہ مقدمہ عصمت کے اہل خانہ کی مرضی کے مطابق درج کرایا جائے گا۔

خیال رہے کہ 18 اپریل کو ابتدائی طور پر لڑکی عصمت کے والدین کا خیال تھا کہ ان کی بیٹی سرکاری اسپتال کے ڈاکٹرز کی مبینہ غفلت کی وجہ سے موت کے منھ میں گئی، انھوں نے کہا تھا کہ وہ دانت کے درد کے لیے اسپتال گئے تھے جہاں ان کی بیٹی کو غلط انجکشن لگایا گیا۔

تاہم 20 اپریل کو پوسٹ مارٹم کے بعد انکشاف ہوا کہ مریضہ کے ساتھ پہلے زیادتی کی گئی اور بعد میں اسے زہر کا انجکشن لگایا گیا جس کے باعث وہ انتقال کر گئی۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں