The news is by your side.

Advertisement

نئے سال کا شیڈول، انضمام کی اہم تجویز سامنے آ گئی

لاہور: پاکستان کرکٹ ٹیم کے سابق کپتان انضمام الحق نے ایک طرف 2021 کے پاکستانی شیڈول پر تنقید کی ہے تو دوسری طرف ایک اہم تجویز بھی دے دی ہے، جس پر اگر عمل ہو تو نہ صرف ٹیم کے لیے بلکہ کرکٹ کے شائقین کے لیے خوش آئند ثابت ہوگی۔

اپنے یو ٹیوٹ چینل پر لیجنڈ بیٹسمین انضمام الحق نے نئے سال کے لیے پاکستانی شیڈول پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ رواں سال جنوبی افریقا نے پاکستان آنا ہے، مختلف ممالک کے خلاف شیڈول سیریز میں 2 ٹیسٹ میچز رکھے گئے ہیں یا محدود اوورز کی ایک سیریز، میں ایسے ٹور کو سیریز نہیں کہتا۔

ماضی کے شان دار بلے باز کا کہنا تھا کہ ان کا ماننا ہے کہ سیریز میں تینوں فارمیٹ ہوں اور کم سے کم 3 میچز کی سیریز ہو، پاکستان کے شیڈول میں کہیں 3 ٹیسٹ نہیں ہیں، یہ اچھی بات نہیں۔

انضمام الحق نے یاد دلایا کہ 1992 ورلڈ کپ کے بعد ہم نے انگلینڈ کا 136 دن کا دورہ کیا تھا، 5 ون ڈے، 5 ٹیسٹ اور انگلینڈ میں 13 کاؤنٹی میچز کھیلے گئے تھے، اس کے علاوہ پریکٹس میچز، ون ڈے اور 2 روزہ میچز بھی تھے۔

ان کا کہنا تھا کہ اتنی مصروفیات میں کھلاڑیوں کو گروم ہونے کا موقع ملا، اس ٹیم میں کئی نئے لڑکے بھی تھے، اس دورے سے وہ سیٹ ہوگئے، لیکن نئے سال میں پاکستانی مصروفیات میں مجھے ایسا نہیں لگتا، اب دیکھیں کہ جنوبی افریقا 2 ٹیسٹ، 3 ٹی 20 میچز کھیلے گا، پھر پاکستان نے جنوبی افریقا کا دورہ کرنا ہے، وہاں بھی محدود اوورز کی سیریز ہوگی۔

انضمام نے کہا کہ رواں برس ایشیا کپ ہے، پی ایس ایل ہے لیکن پاکستان نے جنوبی افریقا جانا ہے، انگلینڈ نے یہاں آنا ہے، پھر ویسٹ انڈیز سے سیریز ہے، نیوزی لینڈ نے پاکستان آنا ہے، پاکستان نے بنگلہ دیش جانا ہے، ورلڈ ٹی 20 بھی ہے لیکن کسی باہمی سیریز میں تینوں فارمیٹ نہیں ہیں اور یہ اچھی بات نہیں ہے۔

انضمام نے تجویز دی کہ اگرچہ کرونا کی وجہ سے کافی مسائل ہیں لیکن میں پھر بھی تجویز دوں گا کہ تینوں فارمیٹ کی مکمل سیریز ہوں، ٹیسٹ میچز 3 ہوں تاکہ پلیئرز گروم ہو سکیں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں