The news is by your side.

Advertisement

ایران کا امریکی ڈرون گرانے کا دعویٰ

تہران : ایران نے امریکی ڈرون گرانے کا دعویٰ کیا ہے جبکہ امریکا نے ایرانی دعویٰ مسترد کرتے ہوئے کہا کوئی امریکی ڈرون ایران کی فضائی حدود میں موجود نہیں تھا۔

تفصیلات کے مطابق امریکا اورایران کشیدہ تعلقات کے درمیان ایران نے اپنی فضائی حدود میں امریکی ڈرون گرانے کا دعوی ٰ کردیا، ایرانی میڈیا کا کہنا ہے ایران کے پاسداران انقلاب نے جنوبی صوبے ہرمزگان میں ایرانی فضائی حدودکی خلاف ورزی کرنے والاامریکی ڈرون مارگرایا۔

دوسری جانب امریکی سینڑل کمانڈ کے ترجمان نے کہا کوئی امریکی ڈرون ایران کی فضائی حدودمیں موجود نہیں تھا۔

گذشتہ روز امریکا سے شدید تنازعے کے پیش نظر ایرانی صدر نے واضح کیا تھاکہ امریکا سے فوجی سطح پر کسی قسم کی جنگ نہیں ہوگی، امریکا کا مقصد معاشی جنگ کے ذریعے ایران کی معیشت کو نقصان پہنچانا ہے، امریکا سمجھتا تھا کہ وہ ایرانی قوم کو گھٹنے ٹیکنے پر مجبور کردیگا لیکن اس نے دیکھ لیا کہ ایرانی قوم اس کے سامنے کھڑی ہوگئی ہے۔

مزید پڑھیں : امریکا سے فوجی سطح پر کوئی جنگ نہیں ہوگی: ایران

یاد رہے ایران اور امریکا کے درمیان بڑھتے ہوئے تناؤ کی وجہ سے امریکا نے اپنے ایک ہزار مزید فوجی اس خطے میں بھیجنے کا فیصلہ کیا تھا ، جس کے ردعمل میں چین نے متنبہ کیا تھا کہ امریکا کی جانب سے خطے میں مزید 1000 فوجیوں کی تعیناتی سے دنیا میں شرانگیزی کا دروازہ کھل سکتا ہے۔

اس سے قبل پاسداران انقلاب نے خبردار کیا تھا کہ ایرانی میزائل سمندر میں موجود طیارہ بردار جہازوں کو نشانہ بنانے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔

خیال رہے ایران پرامریکی پابندیوں کے بعددونوں ممالک کے تعلقات تناؤ کا شکار ہیں اور امریکی جنگی بحری بیٹرے اور فوجی مشرق وسطی میں موجود ہیں جبکہ امریکا ایران پرآئل ٹینکروں پرحملوں کا الزام بھی عائد کرچکا ہے۔

ایران نے امریکی الزامات کومکمل مسترد کرتے ہوئے کہا تھا کہ ایران اپنے دفاع کا حق محفوظ رکھتا ہے جبکہ ایران نے پابندیوں کے جواب میں یورینیم کا ذخیرہ مقررہ حد سے بڑھانے کا اعلان بھی کیا ہے۔

عالمی برادری نےمشرق وسطی میں کشیدگی میں کمی کےلئےفریقین سے تحمل سے کام لینےکی اپیل کی ہے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں