The news is by your side.

Advertisement

عراق میں ہونے والے پر تشدد مظاہروں کے پس پردہ اسرائیل ہے، ایران کا الزام

تہران : ایران نے الزام عائد کیا ہے کہ عراق میں جاری پر تشدد مظاہروں میں پس پردہ اسرائیل ملوث ہے کیونکہ اسرائیل کا مقصد مذہبی اجتماعات کو متاثر کرنا ہے۔

تفصیلات کے مطابق ایران کے سینیئر مذہبی رہنما آیت اللہ محمد امامی کاشانی نے کہا ہے کہ عراقی دارالحکومت میں ہونے والے پرتشدد مظاہروں کے پس پشت اسرائیلی ہاتھ ہے۔

انہوں نے یہ بھی کہا کہ اسرائیل رواں مہینے کے دوران  منعقدہ مذہبی اجتماعات کو متاثر کرنا چاہتا ہے۔ ایرانی رہنما آیت اللہ محمد امامی کاشانی کے مطابق کربلا میں منعقد ہونے والی عربئین کی مذہبی رسومات کو امریکا اور صیہونی ریاست نشانہ بنا کر وہاں جمع ہونے والے لاکھوں زائرین کے اجتماع میں گڑبڑ پیدا کرنے کی سازش کر رہے ہیں۔

واضح رہے کہ عراق میں رواں ہفتے کے دوران ہونے والے پرتشدد مظاہروں میں ہونے والی ہلاکتوں کی تعداد 46تک پہنچ گئی ہیں۔

علاوہ ازیں عراق کے مذہبی رہنما آیت اللہ سیستانی نے بھی سیکیورٹی فورسز اور مظاہرین پر پُرتشدد کارروائیوں سے دور رہنے پر زور دیا ہے۔

عراق میں حکومت مخالف مظاہروں پر آیت اللہ سیستانی کا کہنا ہے کہ حکومت مظاہرین کے مطالبے پر توجہ دے، اس سے قبل کہ دیرہوجائے۔

غیر ملکی خبر رساں ایجنسی کے مطابق ان کا مزید کہنا تھا کہ حکومت عوامی خدمات میں بہتری لائے، روزگار کے مواقع پیدا کرے، کرپشن سے نمٹے اور مجرموں کو سزادے۔

مزید پڑھیں : عراق میں مہنگائی کے خلاف پُر تشدد مظاہرے، ہلاکتوں کی تعداد میں اضافہ

اب تک کی تازہ اطلاعات کے مطابق گزشتہ چار روز سے جاری حکومت مخالف مظاہروں میں درجنوں افرآد ہلاک جبکہ سیکڑوں افراد زخمی بھی ہوئے ہیں ان زخمیوں میں سیکیورٹی اہلکار بھی شامل ہیں۔ عراق میں مظاہروں کے بعد مختلف شہروں میں فوج بھی تعینات ہے جبکہ ناصریہ شہر کو فوج کے حوالے کیا گیا ہے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں