The news is by your side.

Advertisement

جلیل شرقپوری نے نواز شریف کو ’لوٹا‘ قرار دے دیا

لاہور: مسلم لیگ ن کے رکن اسمبلی جلیل شرقپوری نے اپنے ساتھ پیش آنے والے واقعے پر نواز شریف اور رانا ثنا اللہ کو کل تک کا الٹی میٹم دیتے ہوئے کہا کہ یہ سب بھی لوٹے ہیں کیا نواز شریف نے پارٹی نہیں بدلی۔

اے آر وائی نیوز کی رپورٹ کے مطابق مسلم لیگ ن کے رکن اسمبلی جلیل شرقپوری نے نیوز کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ جس دن واقعہ پیش آیا کئی لوگوں نے رابطہ کیا، مجھ سے رابطہ کرنیوالوں نے اظہار نفرت کیا، انہوں نے کہا کہ بدتمیزی کرنے والے کے خلاف کل تک نواز شریف، رانا ثنا کے فیصلے کا انتظار کروں گا۔

انہوں نے بتایا کہ ن لیگ کا ٹکٹ نوازشریف کے کہنے پر لیا تھا، اختلافات اپنی جگہ پر تھے مگر اسمبلی کا ایک پلیٹ فارم ملتا ہے، پارٹی قیادت کا فیصلہ غیرمناسب ہے تو اظہار رائے کا حق ہے۔

رکن اسمبلی نے کہا کہ مسلم لیگ کے پلیٹ فارم پر دوبارہ ادب واحترام کے ساتھ آیا ہوں، جماعتوں میں رواج ہونا چاہیے ویژن کے خلاف آواز کو سننا چاہیے، خان صاحب کےویژن کوسپورٹ کرتا تھا پھربھی انکی ٹکٹ قبول کی،

جلیل شرقپوری نے کہا کہ بدتمیزی کرنیوالے کیخلاف کل تک فیصلہ نہ آیا توسمجھوں گا یہ خود اس مزاج کے ہیں، اداروں کے ساتھ ٹکراؤ کسی صورت مفاد میں نہیں، ہم بھی پاکستان کیلئے سیاسی پلیٹ فارم پر آتے ہیں، سب سے پہلے پاکستان ہے، کسی خاندان یا سیاسی پارٹی کی حیثیت بعد میں۔

انہوں نے کہا کہ پارٹی قیادت کے فیصلے پر اختلاف رائے رکھتا ہوں، بدتمیزی کرنیوالے شخص کو نوٹس تک نہیں دیا گیا، مجھے جب شوکاز دیا گیا تو اس کا جواب دے دیا تھا ، میرے سر پر لوٹے رکھے گئے جبکہ یہ خود سب لوٹے ہیں۔

انہوں ںے واضح کیا کہ پارٹی میں بلاک بنانے کی کوئی کوشش نہیں کی، میرا مؤقف لوگوں کو اچھا لگا تو بلاک خود بخود بن جائے گا، ابھی تک مجھے نکالنے کا نوٹس نہیں ملا ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں