site
stats
پاکستان

جمشید دستی نے الیکشن اصلاحات بل 2017 سپریم کورٹ میں چیلنج کردیا

لاہور : پاکستان عوامی راج پارٹی کے سربراہ اور رکن قومی اسمبلی جمشید دستی نے الیکشن اصلاحات بل 2017 چیلنج کردیا۔

تفصیلات کے مطابق پاکستان عوامی راج پارٹی کے سربراہ اور رکن قومی اسمبلی جمشید دستی نے الیکشن اصلاحات بل 2017 کیخلاف سپریم کورٹ میں درخواست دائر کردی ہے۔

درخواست میں مؤقف اختیار کیا گیا ہے کہ ایکٹ آئین کے بنیادی ڈھانچے کے خلاف قرار دیا جائے جبکہ انتخابی اصلاحات ایکٹ کالعدم قرار دینے کی استدعا کی ہے۔

جمشید دستی نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ افسوس کی بات ہے کہ پارلیمنٹ میں نالائق اراکین کا قبضہ ہے، قومی اسمبلی اور سینیٹ ایک ڈاکو کی حمایت کررہی ہے۔ یہ بل عوام اور آئین کی توہین ہے ۔

یاد رہے کہ اس سے قبل پاکستان تحریک انصاف ، ایم کیو ایم ، پاکستان عوامی تحریک اور شیخ رشید  الیکشن اصلاحات بل 2017 کیخلاف درخواست دائر کر چکے ہیں، جس میں  استدعا کی ہے کہ انتخابی اصلاحات ایکٹ 2017 کو آئین کے منافی اور کالعدم قرار دیا جائے اور  نواز شریف کوبطور صدر مسلم لیگ ن کام کرنے سے فوری روکا جائے۔


مزید پڑھیں : شیخ رشید نے ختم نبوت قانون اصل حالت میں بحال کرنے کیلئے ڈیڈ لائن دیدی


خیال رہے کہ گذشتہ روز عوامی مسلم لیگ کے سربراہ شیخ رشید نے ختم نبوت قانون اصل حالت میں بحال کرنے کیلئے نمازجمعہ سےپہلے کی ڈیڈ لائن دیدی اور کہا کہ نبیﷺکے نام پر قربان ہونا ہمارا اعزاز ہے۔

واضح رہے کہ دو روز قبل نااہل نواز شریف کو مسلم لیگ ن کی صدارت کا اہل بنانے کے لیے انتخابی اصلاحات ایکٹ 2017 سینیٹ کے بعد قومی اسمبلی میں بھی منظور کرایا گیا تھا۔

ل کی شق 203 میں کہا گیا ہے کہ ہر پاکستانی شہری کسی بھی سیاسی جماعت کی رکنیت اور عہدہ حاصل کرسکتا ہے۔


اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی فیس بک وال پر شیئر کریں۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top