The news is by your side.

Advertisement

امونیا کو متبادل ایندھن بنانے کے لئے تجربات، نئی پیش رفت

ٹوکیو: جاپان نے امونیا کو ایندھن کے طور پر استعمال کیے جانے کے تجربات شروع کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق جاپان بجلی کی پیداوار کے لیے امونیا کو ایندھن کے طور پر استعمال شروع کر رہا ہے، اس سے بجلی کی پیداوار کے عمل میں کاربن ڈائی آکسائیڈ کا اخراج روکا جا سکے گا۔

اس سلسلے میں وزارت صنعت نے امونیا سے متعلق پہلی آن لائن بین الاقوامی کانفرنس کا انعقاد کیا، اجلاس میں امونیا کے خام مال، قدرتی گیس پیدا کرنے والے ممالک کی حکومتوں اور کمپنیوں کے نمائندے شریک ہوئے۔

جاپان کی وزارت نے اس خواہش کا اظہار کیا کہ امونیا کی فراہمی کی مقامی سپلائی چین کی تشکیل کے لیے بجلی پیدا کرنے والی اور تجارتی کمپنیوں کے ساتھ مل کر کام کرنا چاہتی ہے۔

آن لائن بین الاقوامی کانفرنس میں متعلقہ وزارات کا کہنا تھا کہ وہ ایندھن کی فراہمی کو یقینی بنانے کے لیے قدرتی گیس پیدا کرنے والے ممالک کے ساتھ تعلقات کو بھی بہتر بنانے کا ارادہ رکھتی ہے۔

یہ بھی پڑھیں: جاپانی ماہرین کی نئی ایجاد

میڈیا رپورٹ کے مطابق وزارت اس ٹیکنالوجی کی تیاری کے لیے تقریباً 63 کروڑ ڈالر خرچ کرنے کا منصوبہ رکھتی ہے، ٹیکنالوجی وضع کرنے میں اس بات کا خیال رکھا جائے گا کہ اس سے ہونے والا نائٹروجن ہائیڈروجن زہریلا اخراج، ماحولیاتی معیارات کے اندر رہے۔

خیال رہے کہ امونیا گیس جلنے پر کاربن ڈائی آکسائیڈ خارج نہیں کرتی، امونیا کو جلانے پر زہریلی گیس نائٹروجن آکسائیڈ خارج ہوتی ہے، تاہم یہ توقع ظاہر کی گئی ہے کہ جلنے کے عمل میں ہوا کی مناسب مقدار کے ذریعے اس کے اخراج میں کمی کی جائے گی۔

ان تجربات کا مقصد موجودہ بجلی گھروں کو استعمال کرتے ہوئے کاربن ڈائی آکسائیڈ کا خاتمہ ہے، کیوں کہ کوئلے سے چلنے والے بجلی گھروں پر دنیا بھر میں تنقید میں اضافہ ہو رہا ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں