The news is by your side.

Advertisement

جاپان کے بادشاہ 30 برس حکمرانی کے بعد آج تخت سے دست بردار ہو رہے ہیں

دو سو سال میں اپنا تخت خود سے چھوڑنے والا پہلا بادشاہ

ٹوکیو : جاپان پر تیس برس تک حکمرانی کرنے کے بعد بادشاہ اکی ہیتو آج تخت سے دست بردار ہو رہے ہیں، اب ان کے بیٹے تخت و تاج سنبھالیں گے۔

تفصیلات کے مطابق جاپان کے بادشاہ اکی ہیتو آج تیس برس بعد تخت سے دست بردار ہو رہے ہیں، ان کی دست برادری کی تقریب کو دیکھنے کیلئے ہزاروں افراد ٹوکیو پہنچے ہیں۔

پچاسی برس کے بادشاہ بڑھتی عمر اور گرتی صحت کے باعث اپنا منصب چھوڑ رہے ہیں ۔ دو سو سال کے دوران اکی ہیتو پہلے بادشاہ ہیں جو اپنا تخت خود سے چھوڑ رہے ہیں، انھوں نے تخت دستبرداری کے لیے  قانونی طورپرباقاعدہ اجازت لی ہے۔

جاپانی بادشاہ اکی ہیتو کی دست بردار کے بعد ان کے بیٹے ناروہیتو کل سے تخت و تاج سنبھالیں گے۔

یاد رہے 2016 میں بادشاہ نے اپنے ایک خطاب میں کہا کہ انھیں یہ خوف ہے کہ ان کی عمر انھیں ان کے فرض منصبی کو نبھانے میں مشکلات پیدا کرے گی اور انھوں نے قوی عندیہ دیا کہ وہ دست بردار ہونا چاہتے ہیں۔

ناروہیتو جاپان کے 126 ویں بادشاہ ہوں گے اور وہ باضابطہ طور پر نئے ‘ریوا’ عہد میں ملک کی سربراہی کریں گے،  جس کے بعد  رواں ‘ہیسیئي’ عہد کا خاتمہ ہو جائے گا جو   1989 میں  اکیہیتو کے تخت نشین ہونے کے ساتھ شروع ہوا تھا۔

ناروہیتو نے  آکسفورڈ  سے  تعلیم حاصل کی اور  28 سال کی عمر میں ولی عہد بنائے گئے، انھوں نے1993 مینر شہزادی ولی عہد مساکو اووادا  سے شادی کی ، جن سے ان کی ایک بیٹی   شہزادی آئیکو  ہے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں