The news is by your side.

Advertisement

”یہ الفاظ تجھے کس نے سکھائے؟“

سید بدرِ عالم بھی بابائے اردو کے ایک رتن تھے، ان کے خادمِ خاص۔ بابائے اردو کی طرح انھوں نے بھی گھر بار کا جنجال نہیں پالا تھا۔

خواجہ صاحب کے بہ قول ان کے دو شوق تھے۔ اخباروں سے فلم ایکٹریسوں کی تصویریں کاٹ کر ایک رجسٹر میں چپکانا اور اگر کوئی شخص گفتگو میں کوئی نیا لفظ استعمال کرے تو اسے یاد کر لینا اور اپنی گفتگو میں استعمال کرنا۔

ایک دن ان کی موجودگی میں کسی صاحب نے ہیچ و پوچ، کے الفاظ استعمال کیے۔

سید صاحب کو یہ الفاظ بڑے بھلے معلوم ہوئے اور انھوں نے یاد کرلیے، استعمال کے منتظر رہے۔

اتفاق یہ کہ دو تین دن کے بعد جگر صاحب انجمن آئے۔ کراچی آئے ہوئے تھے تو مولوی صاحب سے ملنے آگئے۔

مولوی صاحب نے انھیں ہاتھوں ہاتھ لیا۔ جگر صاحب اطمینان سے بیٹھے تو شعر خوانی کا آغاز ہوا۔ جگر صاحب کا لحن اور کلام کی رعنائی، سید صاحب مسحور ہوگئے۔ بے اختیار ہو کر بولے:

”ایسا ہیچ و پوچ کلام تو آج تک نہیں سنا۔“

جگر صاحب سناٹے میں آگئے۔ مولوی صاحب نے ڈانٹا، ”کیا بکتا ہے۔“

مگر سید صاحب بھی اپنی وضع کے ایک ہی تھے، کہنے لگے، ”چاہے مار ڈالو، مگر کلام بڑا ہیچ و پوچ ہے۔“

مولوی صاحب نے چھڑی سنبھالی، مگر کچھ سوچ کر ٹھیرے۔ پوچھا، ”کچھ سمجھتا بھی ہے، کیا بک رہا ہے؟“

سید صاحب نے کہا۔ ”سمجھتا کیوں نہیں۔ بڑا اعلیٰ درجے کا کلام ہے۔“

مولوی صاحب ہنس پڑے، پوچھا، ”یہ الفاظ تجھے کس نے سکھائے؟“

سید صاحب نے بتایا فلاں صاحب اس دن آئے تھے، انھوں نے یہ الفاظ کہے تھے، مجھے اچھے لگے، میں نے یاد کرلیے۔

جگر صاحب یہ سُن کر مسکرائے اور سید صاحب کی گلو خلاصی ہوئی۔

(ڈاکٹر اسلم فرخی کی تحریر سے اقتباس)

fb-share-icon0
Tweet 20

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں