The news is by your side.

Advertisement

کویت میں عجیب معاملہ، حکومت حیران

کویت سٹی: کویت میں حکومت کو عجیب معاملہ درپیش ہے، کئی شعبوں میں ملازمتوں کی اسامیاں خالی ہیں لیکن شہری ملازمتوں کے لیے تیار نہیں ہیں۔

تفصیلات کے مطابق ملک میں کویتائزیشن کے بعد جہاں سرکاری اور نجی شعبہ جات میں کویتی شہریوں کی بڑی تعداد دیکھنے میں آ رہی ہے، وہاں کچھ مخصوص ملازمتیں ایسی بھی ہیں جن سے کویتی شہری گریز کر رہے ہیں۔

رپورٹس کے مطابق سرکاری ایجنسیوں میں کویتی ملازمین کی تعداد میں اضافے کے باوجود شہریوں کے لیے موجود ملازمتوں کی اسامیاں تاحال خالی ہیں، اگرچہ سرکاری محکموں میں ناقص تقسیم کا عمل بھی بے روزگاری کا سبب بنی ہوئی ہے تاہم یہ بھی دیکھا جا رہا ہے کہ چند ملازمتیں ایسی ہیں جن پر کویتی شہری کام نہیں کرنا چاہتے۔

سول سروس کمیشن کو چند ملازمتوں کے حوالے سے بتایا گیا ہے کہ ان میں بھرتیوں کے لیے درخواستیں بہت ہی کم آئی ہیں، حالاں کہ ہر سال ہزاروں شہری متعلقہ ملازمتوں کے مطابق تعلیم حاصل کرتے ہیں۔

بتایا گیا ہے کہ طب کے شعبے میں افرادی قوت کی شدید قلت ہے، بالخصوص ڈاکٹرز، ڈینٹسٹس، نرسز، اسسٹنٹ نرسز، اور لیبارٹری کے شعبوں ریڈیولوجی، فزیوتھراپی، پروفیشنل تھراپی، دانتوں کی لیبارٹری، نس بندی، سانس کی تھراپی، اور نیوکلیئر میڈیسن کے شعبوں کے ساتھ ساتھ ویٹرنری میڈیسن گروپ میں بھی اسامیاں خالی پڑی ہوئی ہیں۔

سرکاری اداروں میں انفارمیشن سسٹمز اینڈ ٹیکنالوجی گروپ میں پروگرام ڈیزائنر، جونیئر دستاویز اور انفارمیشن تجزیہ کار، کمپیوٹر آپریٹر اور سائبر سیکورٹی ماہر کی ضرورت ہے۔

ٹیچنگ کے شعبے میں کیمسٹری، فزکس، ریاضی، عربی، فرانسیسی، بائیولوجی اور آرٹ کے اساتذہ کی ضرورت ہے جب کہ ریاضی اور شماریات گروپ کے لیے اعداد و شمار کے تجزیہ کاروں کی ضرورت ہے۔

اس کے علاوہ سرکاری اداروں کو انسپکشن گروپ میں بھی ڈپلومہ ہولڈرز کی ضرورت ہے جیسا کہ فوڈ انسپکٹرز، ایڈمنسٹریٹو سپورٹ گروپ میں سیکریٹری اور ٹائپسٹ، انجینئرنگ گروپ میں اسسٹنٹ کمپیوٹر انجینئر، ٹیکنیشن اور دوسرا الیکٹرانکس یا آلات ٹیکنیشن جب کہ لا گروپ میں قانونی کلرک کی ضرورت ہے۔

لیکن شہریوں کے لیے ملازمتوں کے لامحدود مواقع اور کثیر اسامیوں کے باوجود وہ ان ملازمتوں پر کام نہیں کرنا چاہتے اور یہ اسامیاں خالی پڑی ہوئی ہیں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں