The news is by your side.

سینیٹر اعظم سواتی کی درخواست ضمانت پر فیصلہ محفوظ ، کل سنایا جائے گا

اسلام آباد : اسپیشل جج سینٹرل نے متنازعہ ٹویٹ کیس میں گرفتار پی ٹی آئی کے رہنماء سینیٹر اعظم سواتی کی درخواست ضمانت پر فیصلہ محفوظ کرلیا۔

تفصیلات کے مطابق اسپیشل جج سنٹرل راجہ آصف محمود نے سینیٹر اعظم سواتی کی درخواست ضمانت پر سماعت کی۔

دوران سماعت اسپیشل پراسیکیوٹر راجہ رضوان عباسی نے دلائل دیتے ہوئے عدالتی دائرہ اختیار پر اعتراض کر دیا۔

راجہ رضوان عباسی نے کہا کہ ایف آئی اے عدالت کے سواتی کیس کے معاملے میں دائرہ کار پر بات کرو،یہ معاملہ اس عدالت کے دائرے سے باہر ہے اور سیشن جج کے پاس جانا چاہیے۔

اسپیشل پراسیکیوٹر کا کہنا تھا کہ اعظم سواتی نے ٹویٹ کے ذریعے آرمی چیف کے خلاف نفرت انگیز بیان دیا، اعظم سواتی نے ٹویٹ کے ذریعے فوج کے اندر بغاوت کی کوشش کی اور چند ملزمان کی بریت پر آرمی چیف پر الزام لگایا۔

ایف آئی اے پراسیکوٹر نے کہا کہ آرمی چیف کا عدالت کے فیصلے سے کیا تعلق ہے ؟ سینیٹر اعظم سواتی نے پبلک فورم پر آرمی چیف اور اداروں کے خلاف اشتعال انگیز بیان دیا اور دوران تفتیش ٹویٹ کا اعتراف کرلیا۔

بابر اعوان ایڈووکیٹ نے کہا کہ اعظم سواتی نے ٹویٹ کرکے اپنے اظہار رائےکی آزادی کا آئینی حق استعمال کیا،اعظم سواتی پر تشدد کیا گیا، تذلیل کی گئی،کیا اعظم سواتی کے ٹویٹ کے بعد فوج میں بغاوت ہوگئی؟ کیا اعظم سواتی کے ٹویٹ کرنے پر کوئی صوبیدار بھاگ گیا ؟ کپتان نے استعفیٰ دیا؟

فریقین کے دلائل مکمل ہونے پر عدالت نے فیصلہ محفوظ کرلیا ، اعظم سواتی کی درخواست ضمانت پر فیصلہ کل سنایا جائے گا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں