The news is by your side.

Advertisement

فوجی عدالتوں پر حکومت آل پارٹیز کانفرنس طلب کرے، عبدالغفورحیدری

لاڑکانہ: سینیٹ کے ڈپٹی چیئرمین مولانا عبدالغفور حیدری نے کہا ہے کہ فوجی عدالت کی حمایت دو سال قبل صرف نیشنل ایکشن پلان کی وجہ سے کی تھی، حکومت کو چاہیے وہ اس حساس معاملے پر آل پارٹیز کانفرنس طلب کرے۔

ان خیالات کا اظہار مولانا عبد الغفور حیدری نے لاڑکانہ میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے کیا۔ ڈپٹی چیئرمین سینٹ کا کہنا تھا کہ پلی بارگین کے حوالے سے نیب کے ترمیمی آرڈیننس کی ذاتی طور پر حمایت کرتا ہوں کیونکہ یہ کوئی انصاف نہیں کہ کوئی بھی شخص کرپشن کر کے 25 فیصد رقم کرے اور رہا ہوجائے۔

انہوں نے کہا کہ دو سال قبل نیشنل ایکشن پلان کی کامیابی کے لیے فوجی عدالتوں کی حمایت کی تھی تاہم اب اس کی مدت ختم ہوگئی ہے تو حکومت کو چاہیے تمام جماعتوں سے مشاورت کر کے کوئی بھی فیصلہ کرے۔

عبد الغفور حیدری نے کہا کہ کشمیر کا مسئلہ حل کیے بغیر خطے میں امن ممکن نہیں، جمعیت علمائے اسلام نے کشمیر کے مسئلے پر ہر بار اپنی آواز بلند کی، جس کے باعث آج دنیا بھر میں مقیم کشمیری اس مسئلے پر اپنی آواز بلند کررہے ہیں۔

ڈپٹی چیئرمین سینیٹ نے کہا کہ بھارتی وزیراعظم نریندر مودی پاکستان کو توڑنے کی دھمکیاں دے رہے ہیں تاہم انہیں پاکستانی فوج اور یہاں کی باغیرت عوام کے جذبوں کا علم نہیں، پاکستان ایک ایٹمی طاقت ہے جو کسی بھی جارحیت کا جواب دینے کی صلاحیت رکھتا ہے۔

مولانا عبدالغفور حیدری نےمزید کہا کہ ’’جمعیت علمائے اسلام کے قیام کو 100 سال مکمل ہونے پر 7 اپریل سے تین روزہ اجتماع پشاور میں منعقد کیا جائے گا، جس میں 35 لاکھ افراد شرکت کریں گے جبکہ امام کعبہ خصوصی خطاب بھی فرمائیں گے‘‘۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں