The news is by your side.

Advertisement

کراچی: ڈاکٹر کی مبینہ غفلت سے ایک اور بچی جاں بحق، ڈاکٹر گرفتار

کراچی: شہر قائد کے علاقے گلشن اقبال میں ڈاکٹر کی مبینہ غلفت سے بچی زندگی کی بازی ہار گئی، پولیس نے چوبیس گھنٹے کے اندر اتائی ڈاکٹر عدنان کو حراست میں لے لیا۔

تفصیلات کے مطابق کراچی میں ڈاکٹر کی مبینہ غفلت سے ایک اور بچی کی ہلاکت کا واقعہ پیش آیا، رکشہ ڈرائیور والد گزشتہ رات سانس میں تکلیف کی وجہ سے اپنی بچی کو گلشن اقبال کے علاقے میں نجی کلینک لے کر پہنچا جہاں ڈاکٹرز نے اُسے غلط انجکشن لگا دیا۔

والد نے دعویٰ کیا ہے کہ بچی کو جیسے ہی غلط انجکشن لگایا اُس نے موقع پر ہی دم توڑ دیا اور پھر ڈاکٹر وہاں سے فرار ہوگیا تھا۔

بچی کے والد نے فوری طور پر اطلاع پولیس حکام کو دی جس کے بعد نفری گلشن اقبال 13 ڈی میں واقع کلینک پہنچی۔ پولیس حکام کے مطابق ڈاکٹر عدنان نامی جعلی ڈاکٹر کو ایم بی بی ایس کا مطلب نہیں معلوم اور وہ کلینک چلا رہا تھا۔

مزید پڑھیں: والد نشوہ کا کل شام تک مطالبات پورے نہ ہونے پر احتجاج کا اعلان

پولیس نے ساری رات چھاپے مار کر جعلی ڈاکٹر کو گرفتار کرنے کی کوشش کی مگر اس میں ناکامی کا سامنا رہا البتہ کچھ دیر قبل ڈاکٹر عدنان کو گرفتار کرلیا گیا۔

ایم ایل او جناح اسپتال کا ڈیوٹی پر آنے سے انکار

پولیس اور اہل خانہ نے قانونی کارروائی کے  لیے بچی کی لاش کو پوسٹ مارٹم کے لیے جناح اسپتال منتقل کیا، ایم ایل او ڈاکٹر ذکیہ کے غیر حاضر ہونے کی وجہ سے مزید کاررائی کا آغاز نہ ہوسکا۔ نمائندہ اے آر وائی نذیر شاہ کے مطابق ایم ایل او نے مؤقف اختیار کیا کہ وہ چھٹی پر ہیں اس لیے ڈیوٹی پر نہیں آئیں گی۔

اے آر وائی پر خبر نشر ہونے کے بعد ایم ایل او ڈاکٹر ذکیہ نے نہ صرف اپنا موبائل کھولا بلکہ وہ اسپتال بھی پہنچنے پر رضا مند ہوگئیں۔

ملزم کا ویڈیو بیان

دوسری جانب اے آر وائی نیوز نے گلشن اقبال کےنجی اسپتال میں جاں بحق ہونے والی 8سال کی صبانورکے اتائی ڈاکٹر کی ویڈیو حاصل کرلی جس میں اُس نے اعتراف کیا گیا کہ گزشتہ رات بچی کو میرے کلینک لایا گیا، جب مریضہ کو لایا گیا اُس وقت اُس کی حالت ٹھیک تھی مگر جیسے ہی انجکشن لگایا تو اُسے دورے پڑنا شروع ہوگئے۔

یہ بھی پڑھیں: عدالت نے نشوہ کیس کا فیصلہ سنا دیا

اتائی ڈاکٹر عدنان کا کہنا تھا کہ بچی کے والد کو ہم نے دوسرے اسپتال لے جانے کا مشورہ دیا مگر اُس وقت تک صبا دم توڑ چکی تھی۔ڈاکٹر تعلیم اور ڈگری کے حوالےس ے عدنان کوئی وضاحت نہ دے سکا اور مؤقف اختیار کیا کہ ہومیومیتھک میں تعلیم حاصل کی۔

ابتدائی تحقیقات مین ڈگری جعلی لگ رہی ہے، ڈی ایس پی گلشن علی حسن

ڈی ایس پی گلشن علی حسن کے مطابق ملزم کی ڈگری کی تاحال تصدیق نہیں ہوسکی، ابتدائی تحقیقات میں ملزم کی تعلیمی سند جعلی لگ رہی ہے،  بچی کودی گئی دواؤں کی ڈسکرپشن اوردیگرچیزیں تحویل میں لےلیں۔

دوسری جانب کراچی کے علاقے ملیر کالا بورڈ کے نجی اسپتال میں بھی ڈاکٹرز کی مبینہ غفلت کے باعث 3 ماہ کے بچے کی ایک آنکھ ضائع ہوگئی جبکہ دوسری شدید متاثر ہے۔ والد کے مطابق ڈاکٹرز نے بچے کو ہائی ڈوز دوا دی جس نے ری ایکشن کیا۔ دو روز تک بچے کو تشویشناک حالت میں رکھا گیا جس کے بعد وہ نجی اسپتال میں دم توڑ گیا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں