The news is by your side.

Advertisement

سانحہ بلدیہ کیس، فیکٹری مالک کے سنسنی خیز انکشافات

کراچی: سانحہ بلدیہ کیس میں فیکٹری مالک نے سنسنی خیز انکشافات کرتے ہوئے اپنا بیان ریکارڈ کرادیا۔

تفصیلات کے مطابق سانحہ بلدیہ کیس میں فیکٹری مالک ارشد بھائیلہ نے اے ٹی سی میں بذریعہ اسکائپ بیان ریکارڈ کراتے ہوئے کہا کہ 2004 میں ایم کیو ایم کو 15 سے 25 لاکھ بھتہ جانا شروع ہوا تھا۔

ارشد بھائیلہ کا کہنا ہے کہ فیکٹری ملازم منصور نے ایم کیو ایم سے معاملات طے کرائے تھے، 2012 میں حماد صدیقی نے 25 کروڑ روپے کا مطالبہ کیا، ملزم رحمان بھولا نے دھمکی دی 25 کروڑ دو یا پارٹنر شپ کرو۔

فیکٹری مالک کا کہنا ہے کہ سانحے کے بعد عشرت العباد نے احمد چنائے سے پیغام بھجوایا، فی کس چار لاکھ روپے ایم کیو ایم کے پلیٹ فارم پر جمع کرائیں۔

مزید پڑھیں: سانحہ بلدیہ فیکٹری کو7سال ہوگئے، لواحقین آج بھی انصاف کے منتظر

ارشد بھائیلہ کے مطابق ملزم علی قادری کے اکاؤنٹ میں 5 کروڑ 98 لاکھ روپے جمع کرائے، فیکٹری ملازم منصور نے کہا کہ کراچی میں کام کرنا ہے تو ایم کیو ایم سے بنا کر رکھنا ہوگی۔

انہوں نے بتایا کہ منصور ہی ایم کیو ایم کے لیے 15 سے 25 لاکھ بھتہ لے جاتا تھا، فیکٹری جلنے کے بعد کہا گیا کہ معاملہ ٹھنڈا کرنا ہے تو ہر مرنے والے کے اہل خانہ کے لیے چار چار لاکھ ایم کیو ایم کے پلیٹ فارم پر جمع کرادیں۔

ارشد بھائیلہ کے مطابق سابق ایم این اے سلمان مجاہد بلوچ جیل ملنے آئے اور کہا مجھے وکیل کرلیں معاملہ ٹھنڈا کرادوں گا، ضمانت پر رہا ہوا تو شدید دباؤ میں تھا تو ایم کیو ایم کے ذریعے معاملات طے کرنے کا فیصلہ کیا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں