دیوہیکل بل بورڈز کراچی کے شہریوں کے سروں پر منڈلاتا خطرہ -
The news is by your side.

Advertisement

دیوہیکل بل بورڈز کراچی کے شہریوں کے سروں پر منڈلاتا خطرہ

کراچی : شہر قائد میں لگے سر پر بھاری بھرکم سائن بورڈز لٹکتی تلوارکی صورت اختیار کرگئے، اداروں نےعدالتی احکامات پر عملدرآمد کے بجائے بال پاس کا گیم شروع کردیا۔

کراچی میں جاری مون سون کی بارشوں میں سائن بورڈ اب بھی بڑا خطرہ ہیں، سپریم کی کورٹ کی ڈیڈ لائن آج ختم ہورہی ہے مگر کراچی میں غیرقانونی طور پر نصب اشتہاری بورڈز جہاں تھے وہیں ہیں۔

سپریم کورٹ کا حکم تھا کہ کراچی میں 30 جون 2016ء تک تمام غیر قانونی بل بورڈز اور ہورڈنگز ہٹادیئے جائیں مگر بھاری بھرکم بل بورڈزسے متعلق سپریم کورٹ کا حکم ہلکا پڑ گیا، ہوا میں لٹکے بڑے بڑے سائن بورڈز شہریوں کے سرپرلٹکتی تلوار بنے ہوئے ہیں۔

بدھ کو کالا پل کے قریب کورنگی روڈ پر سائن بورڈ گھر کی چھت پر گرنے سے ایک بچی لہولہان ہوگئی، بارش کے موسم میں انتظامیہ کی روایتی بےحسی ٹس سے مس نہیں ہو رہی، بورڈر اتارنے کاکام سست روی سے جاری ہے۔

وزیر بلدیات اور کمشنر کراچی کی جانب سے دعویٰ کیا جا رہا ہے کہ نوے فیصد سائن بورڈ اتار لئے گئے ہیں تاہم کنٹونمنٹ کے علاقوں میں سائن بورڈ موجود ہیں جنہیں ہٹانے کے لئے اقدامات کئے جا رہے ہیں، کمشنر کراچی کہتے ہیں اپنی ذمہ داری پوری کردی، اب جواب کنٹونمنٹ اوردیگر اداروں سے مانگا جائے۔

واضح رہے کہ چند روز قبل گورنر سندھ ڈاکٹر عشرت العباد خان نے کہا تھا کہ 25 جون تک شہر سے تمام خطرناک اور غیر قانونی ہورڈنگز اور بل بورڈز ختم کردیئے جائیں گے تاکہ شہریوں کے تحفظ کو یقینی بنایا جاسکے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں