The news is by your side.

Advertisement

بلدیہ عظمی کراچی کا 27 ارب 17 کروڑ کا سرپلس بجٹ منظور، اپوزیشن کا شدید احتجاج

کراچی: سٹی کونسل کے بجٹ اجلاس میں اپوزیشن کے شدید احتجاج کے باوجود بلدیہ عظمیٰ کراچی کا 27 ارب سے زائد کا سرپلس بجٹ اتفاق رائے سے منظور کرلیا گیا۔

تفصیلات کے مطابق کراچی سٹی کونسل کے اجلاس میں بجٹ کی منظوری پر اپوزیشن نے بجٹ کی کاپیاں پھاڑ کر شدید نعرے بازی کی، بعد ازاں اجلاس سے واک آؤٹ کیا۔

بجٹ اجلاس میں بلدیہ عظمیٰ کراچی کا مالی سال 2018٫19 کے لیے 27 ارب 17 کروڑ کا سرپلس بجٹ اتفاق رائے سے منظور کیا گیا، مسلم لیگ کے اپوزیشن اراکین بھی مئیر کراچی کے حمایتی بن گئے۔

قبل ازیں مئیر کراچی کی زیرِ صدارت بلدیہ عظمیٰ کراچی کے بجٹ اجلاس کا آغاز ہوتے ہی اپوزیشن نے احتجاج شروع کردیا، بجٹ کی کاپیاں پھاڑ کر مئیر کراچی وسیم اختر کے خلاف شدید نعرے بازی کی۔

مئیر کراچی نے اپوزیشن کے شدید احتجاج کے دوران بجٹ تقریر جاری رکھی، آئندہ مالی سال کے لیے 27 ارب 17 کروڑ روپے کا سرپلس بجٹ میزانیہ پیش کیا گیا۔

بجٹ میزانیے میں 96 لاکھ روپے کی بچت اور اخراجات کا تخمینہ 27 ارب 16 کروڑ روپے لگایا گیا، بجٹ میں ترقیاتی منصوبوں کے لیے 11 ارب روپے مختص کیے گئے۔

حب ڈیم میں پانی انتہائی کم رہ گیا، کراچی میں بحران، ٹینکرمافیا نے پنجے گاڑھ لیے


اپوزیشن کے احتجاج اور واک آوٹ کے بر عکس مسلم لیگ کے اپوزیشن اراکین نے مئیر کراچی کی حمایت کی اور بجٹ کو بہترین قرار دیتے ہوئے وسیم اختر کو خراج تحسین پیش کرتے رہے۔

اس موقع پر مئیر کراچی نے کے ایم سی کے کنٹریکٹ ملازمین کو مستقل کرنے سمیت تمام اضلاع میں ترقیاتی کام کرانے کا بھی اعلان کیا۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں۔ مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچانے کے لیے سوشل میڈیا پر شیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں