The news is by your side.

Advertisement

این اے 240 میں ضمنی انتخاب، پولنگ کا عمل شروع

کراچی: قومی اسمبلی کے حلقے این اے 240 کے ضمنی انتخاب کے لیے پولنگ شروع ہو گئی، پولنگ شام 5 بجے تک بغیر کسی وقفے کے جاری رہے گی۔

تفصیلات کے مطابق اقبال محمد علی کے انتقال کے باعث خالی ہونے والی این اے 240 کی نشست پر ووٹنگ کا عمل شروع ہو گیا ہے۔

حلقے میں لانڈھی اور کورنگی عبداللہ شاہ نورانی ٹاؤن، لانڈھی بابر مارکیٹ، شاہ خالد کالونی، زمان آباد، کرسچن کالونی، جام نگر، خضر آباد، خرم آباد، پیر بخاری کالونی شامل ہیں۔

حلقے کی آبادی 8 لاکھ 54 ہزار سے زائد ہے، حلقے میں ووٹروں کی مجموعی تعداد 5 لاکھ 29 ہزار 855 ہے، جن میں مرد ووٹرز 2 لاکھ 94 ہزار 385، اور خواتین ووٹرز کی تعداد 2 لاکھ 35 ہزار 470 ہے۔

2018 کے الیکشن میں ایم کیو ایم کے اقبال محمد علی 61 ہزار 165 ووٹ لے کر کامیاب ہوئے تھے، ان کے 19 اپریل کو انتقال کے باعث سے یہ نشست خالی ہو گئی تھی۔

حلقے میں پولنگ اسٹیشنز 309 ہیں، حساس پولنگ اسٹیشن 106 جب کہ انتہائی حساس پولنگ اسٹیشنز کی تعداد 203 ہے ، حلقے میں 21 امیدوار میدان میں ہیں، آزاد امیدوار 15 جب کہ سیاسی جماعتوں کے 6 امیدوار انتخاب لڑ رہے ہیں۔

دستبردار

آزاد امیدوار عمیر علی انجم ایم کیو ایم امیدوار کے حق میں دست بردار ہوگئے ہیں، آزاد امیدوار نعیم حشمت نے بھی دست برداری کا اعلان کر دیا ہے۔

جمعیت علمائے اسلام (ف) میئو برادری اور قریشی برادری نے اس حلقے سے ایم کیو ایم کے امیدوار کی حمایت کا اعلان کیا ہے، آزاد امیدوار شاہین خان نے مہاجر قومی موومنٹ کے امیدوار کے حق میں دست برداری کا اعلان کیا۔

دوسری جانب مسلم لیگ ن نے پیپلز پارٹی کے امیدوار کی حمایت کا اعلان کر دیا ہے، حلقے میں متحدہ قومی موومنٹ پاکستان، مہاجر قومی موومنٹ، ٹی ایل پی کے درمیان سخت مقابلہ متوقع ہے۔

بائیکاٹ

تحریک انصاف نے بائیکاٹ کیا ہے جب کہ جماعت اسلامی نے انتخابی عمل میں حصہ نہیں لیا۔

الیکشن ایکٹ 2017 کی سیکشن 193 کے تحت ڈسٹرکٹ ریٹرنگ آفیسر اور ریٹرننگ آفیسر کو مجسٹریٹ درجہ اوّل کے اختیارات تفویض کیے گئے ہیں۔

تمام پولنگ اسٹیشنوں پر موبائل فون کے استعمال پر پابندی ہوگی، حساس پولنگ اسٹیشنوں پر سی سی ٹی وی کیمرے نصب کیے گئے ہیں، تمام پولنگ اسٹیشنوں کے باہر پولیس سیکیورٹی اہل کار تعینات کیے گئے ہیں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں