The news is by your side.

Advertisement

کراچی میں بدترین لوڈشیڈنگ، دورانیہ16 گھنٹے تک پہنچ گیا

کراچی : شہر قائد میں بجلی کی لوڈ شیڈنگ کا دورانیہ سولہ گھنٹے تک پہنچ گیا ، گرمی میں بجلی کی طویل لوڈ شیڈنگ سے عوام کا جینا دوبھر ہوگیا۔

تفصیلات کے مطابق موسم گرما کے آغاز پر کراچی میں دن تو دن رات میں بھی بجلی کی عدم فراہمی شہریوں کیلئے وبال جان بن گئی ہے، شہر کے مختلف علاقوں میں غیراعلانیہ لوڈشیڈنگ کا دورانیہ سولہ گھنٹے تک پہنچ گیا۔

کئی علاقوں میں رات گئے بجلی کی عدم فراہمی پرعلاقہ مکین سڑکوں پر نکل آئے اور کےالیکٹرک کوآڑے ہاتھوں لیا، مظاہرین کا کہنا تھا کہ ہردوگھنٹے بعد چار گھنٹے کی لوڈ شیڈنگ ہورہی ہے اور شکایتی مرکز پر کوئی فون نہیں اٹھاتا۔

شہرکے مختلف علاقوں میں بارہ بارہ گھنٹے کی لوڈ شیڈنگ ہورہی ہے جبکہ لوڈشیڈنگ سے مستثنیٰ علاقوں میں بھی چار چار بار بجلی جارہی ہے۔

بجلی سے متاثرہ علاقوں میں لیاری،گلستان جوہر ،اورنگی، نارتھ کراچی، لانڈھی، شاہ فیصل کالونی، لیاقت آباد، ناظم آباد، گلبرگ، فیڈرل بی ایریا سمیت دیگر علاقے شامل ہیں۔

ذرائع کے مطابق مختلف علاقوں میں رات کو بھی مراحلہ وار 4گھنٹے لوڈشیڈنگ کی جارہی ہے، اب ہر2 گھنٹے بعد 4گھنٹے کی لوڈشیڈنگ ہوگی۔

دوسری جانب کے الیکٹرک ساری ذمہ داری سوئی گیس کمپنی پر ڈال کر بری الذمہ ہوگئی۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ وزیر اعلیٰ سندھ نے وزیر اعظم کو اس معاملے میں کردار ادا کرنے کیلئے خط بھی لکھا ہے، وفاق کی مداخلت کےبعد سوئی سدرن گیس کمپنی اور کے الیکٹرک کےدرمیان معاملات میں کسی حد تک طے پاگئے ہیں، دو دنوں گیس کی فراہمی کے معاملات بہتر ہوجانےکا امکان ہے۔


مزید پڑھیں :پاک ویسٹ انڈیز کرکٹ میچز اور رمضان میں لوڈ شیڈنگ کی صورتحال مزید خراب ہونے کا خدشہ


یاد رہے اس سے قبل کے الیکٹرک نے شہر میں اعلانیہ لوڈ شیڈنگ کادورانیہ بڑھانے کا اعتراف کرتے ہوئے گیس کی قلت کو جواز بنا کر کہا تھا کہ شارٹ فال کے باعث کراچی والوں کو ویسٹ انڈیز کی سیریز اور رمضان المبارک کے دوران طویل لوڈشیڈنگ کا سامنا کرنا پڑے گا۔

ترجمان کے الیکٹرک کا کہنا تھا کہ گیس کی کمی کےباعث پیداوارمیں شارٹ فال ہے، 190 کی بجائے90ایم ایم سی ایف ڈی گیس مل رہی ہے، 50 میگا واٹ کےگیس پر چلنے والے پلانٹس بندہیں، ایک گھنٹے کی اضافی لوڈشیڈنگ کرنا پڑرہی ہے،زیادہ گیس ملے گی تو بجلی بھی زیادہ پیدا ہوگی۔

ایس ایس جی سی نے کہا تھا کہ کےالیکٹرک نے اسی ارب کے واجبات ادا کرنےہیں، دس ماہ سے سابق واجبات ادا نہیں کیےگئے، کے ای ایس سی کا تین ماہ سے کرنٹ بل روکا ہوا ہے، ادائیگی نہیں کی ہے،سہولت کیلئے واجبات کے باوجودگیس دے رہے ہیں۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں، مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچانے کے لیے سوشل میڈیا پر شیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں