The news is by your side.

Advertisement

حجاب ممنوع: دسویں جماعت کی طالبہ نے امتحانات کے بائیکاٹ کی دھمکی دے دی

کرناٹک: بھارتی ریاست کرناٹک کے ایک اسکول میں‌حجاب کی اجازت نہ ملنے پر دسویں جماعت کی مسلمان طالبہ نے امتحانات کے بائیکاٹ کی دھمکی دے دی ہے۔

تفصیلات کے مطابق منگل کو ایک مسلمان طالبہ نے کرناٹک کے شیوموگا ضلع کے ایک اسکول میں حجاب کی اجازت نہ دیے جانے پر دسویں جماعت کے امتحانات کا بائیکاٹ کرنے کی دھمکی دے دی۔

حجاب کے سلسلے میں تنازعہ اور احتجاج کرناٹک بھر میں شدت اختیار کرتا جا رہا ہے، شیوموگا ضلع کی طالبہ نے کہا کہ اگر اسے حجاب پہن کر امتحانی ہال کے اندر جانے کی اجازت نہیں دی گئی تو وہ اپنے امتحانات کا بائیکاٹ کر دے گی۔

بھارتی میڈیا رپورٹس کے مطابق مذکورہ لڑکی دسویں جماعت کے امتحانات میں بیٹھنے کے لیے حجاب پہن کر اسکول گئی تھی، جب اسے کلاس روم میں داخل ہونے سے روک دیا گیا تو اس نے امتحانات کا بائیکاٹ کیا اور یہ کہہ کر اسکول سے باہر چلی گئی کہ وہ امتحان دینے کی بجائے حجاب میں رہنا پسند کرے گی۔

یہ واقعہ ایسے ماحول میں سامنے آیا ہے جب ریاستی حکومت کی جانب سے کلاسیں دوبارہ کھولنے کے فیصلے کے بعد کئی والدین اپنے بچوں کو حجاب پہن کر اسکول بھیجنے پر اصرار کر رہے ہیں، پیر کو اسکول کھلنے کے بعد دوسرے دن بھی کئی طالبات نے پابندی کے خلاف احتجاج کیا۔

مسلمان لڑکی نے صحافیوں کو بتایا کہ ہم بچپن سے ہی حجاب پہن کر بڑے ہوئے ہیں اور ہم اسے ترک نہیں کر سکتے، میں امتحان میں نہیں بیٹھوں گی اور گھر چلی جاؤں گی۔

احتجاج کے ایک اور واقعے میں، کرناٹک کے کوڈاگو ضلع کے تقریباً 20 مسلم طالبات نے نیلے ہڈیکیرے پبلک اسکول میں حجاب پر پابندی کے خلاف احتجاج کیا، یہ اس وقت ہوا جب اسکول انتظامیہ نے طالبات کو حجاب پہننے سے روکنے کی کوشش کی اور کلاسوں میں جانے سے پہلے اسے ہٹانے کو کہا، اس کے رد عمل میں طالبات نے اسکول سے واک آؤٹ کر کے احتجاج شروع کر دیا۔

گزشتہ روز کرناٹک کے ایک اور سرکاری اسکول میں انتظامیہ نے طالبات سے امتحان میں بیٹھنے سے قبل حجاب اتارنے کی ہدایت کی، تو اس پر طالبات نے حجاب اتارنے کی بجائے امتحانات کا بائیکاٹ کرنے کو ترجیح دی۔

Comments

یہ بھی پڑھیں