The news is by your side.

Advertisement

حریت رہنماؤں کا ٹرمپ کی طرف سے مسئلہ کشمیر کے لیے ثالثی کی پیشکش کا خیرمقدم

سرینگر: مقبوضہ کشمیر میں کل جماعتی حریت کانفرنس کے چیئرمین سیدعلی گیلانی، میر واعظ عمرفاروق اور دیگر حریت رہنماﺅں نے دیرینہ تنازعہ کشمیر کے حل کیلئے بھارت اور پاکستان کے درمیان ثالثی کی امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی پیشکش کا خیرمقدم کیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق سیدعلی گیلانی نے سرینگر میں جاری ایک بیان میں کہا کہ امریکا کو کشمیر کی آزادی کیلئے اپنا کردار ادا کرنا چاہیے۔ انہوں نے مسئلہ کشمیر کو اجاگر کرنے پر پاکستان کا شکریہ ادا کیا۔

ان کا کہنا تھا کہ جموں وکشمیر ایک دیرینہ تنازعہ ہے اور کشمیریوں کی تین سے زائد نسلیں اس تنازعے کی نذر ہو چکی ہیں۔ میرواعظ عمرفاروق نے امریکی صدر کی پیشکش کا خیرمقدم کرتے ہوئے کہا کہ کشمیری عوام تنازعے کے سب سے زیادہ متاثرہ فریق ہونے کی حیثیت سے دیرینہ تنازعہ کشمیر کا جلد حل چاہتے ہیں۔

دیگر حریت رہنماﺅں اور تنظیموں شبیر احمدڈار، محمد یوسف نقاش، محمد اقبال میر ، انجینئر ہلال احمدوار،میر شاہد سلیم ، امتیاز احمد ریشی، غلام نبی وسیم، غلام نبی وار، جموں وکشمیرلبریشن فرنٹ اور ڈیموکریٹک فریڈم پارٹی نے اپنے الگ الگ بیانات میں کہا ہے کہ حل طلب مسئلہ کشمیر خطے میں ایک نیوکلیر فلیش پوائنٹ ہے جو کسی بھی وقت پورے خطے کو اپنی لپیٹ میں لے سکتا ہے۔

ٹرمپ کشمیر پر پاکستانی دھنیں گنگنا رہے ہیں، بھارتی میڈیا کا واویلا

واشنگٹن میں قائم ورلڈ ایوئر نیس فورم کے سیکرٹری جنرل غلام نبی فائی نے صدر ٹرمپ کی ثالثی کی پیشکش پر ردعمل ظاہر کرتے ہوئے کہا کہ تنازعہ کشمیر کے حوالے سے صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے اصولی موقف اختیار کرنے پر امریکا میں مقیم کشمیری اور مقبوضہ کشمیر کے عوام خوش ہیں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں