The news is by your side.

Advertisement

کے سی آر ٹرین راولپنڈی سے کراچی کے لیے روانہ ہو گئی (ویڈیو دیکھیں)

کراچی: شہر قائد کے باسیوں کا دیرینہ مسئلہ اب حل ہونے کو ہے، کراچی والوں کے لیے ٹرانسپورٹ کی بڑی سہولت مل گئی ہے۔

تفصیلات کے مطابق کراچی سرکلر ریلوے کی بوگیاں کراچی کی جانب رواں دواں ہو گئی ہیں، 10 بوگیاں 1 پاور وین اور 2 انجن آج کراچی پہنچ جائیں گے۔

دو انجن پاور وین اور دس بوگیوں پر مشتمل سرکلر ریلوے کا خالی ریک اتوار کو پنڈی سے روانہ کیا گیا تھا، جسے آج شہر قائد پہنچنا ہے۔

وزیر ریلوے شیخ رشید احمد نے کہا تھا کہ 19 نومبر سے پپری براستہ لانڈھی اور کراچی سٹی سے اورنگی تک سرکلر ریلوے چلائی جائے گی، پپری اسٹیشن اور اورنگی اسٹیشن سے صبح 7 بجے سرکلر ریلوے کی پہلی ٹرینیں 20 سال بعد دوبارہ خستہ حال ریلوے ٹریک پر چلیں گی۔

واضح رہے کہ وزیر مینشن سے اورنگی اسٹیشن تک کوئی بھی اسٹیشن قابل استعمال اور درست حالت میں نہیں ہے، سرکلر ریلوے بغیر تیاری کے جلد بازی مِیں شروع کیے جانے سے متعدد مسائل جنم لے سکتے ہیں۔

دوسری طرف سرکلر ریلوے کے لیے جدید طرز کی خوب صورت آرام دہ بوگیاں اور انجن تیار کیے گے ہیں، ہر بوگی میں آرام دہ نشستیں، ہینڈل ہک، باتھ روم، ایل سی ڈی، وائی فائی اناؤسمنٹ سسٹم اور اسٹیشن کی معلومات کے لیے ڈیجیٹل ڈسپلے اسکرین لگائی گئی ہے۔ تاہم خستہ حال اور خطرناک ٹریک پر نئی بوگیاں اور انجن خراب ہونے کا بھی خدشہ ہے۔

کے سی آر کے حوالے سے اہم معلومات

کراچی سٹی سے اورنگی اسٹیشن تک آزمائشی ٹرین نے 20 منٹ کا سفر ایک گھنٹہ 50 منٹ میں طے کیا تھا، کم دورانیے کا سفر ایک گھنٹہ پچاس منٹ میں طے ہونے کی وجہ سے عوام کی جانب سے خدشات اور عدم دل چسپی کا اظہار بھی سامنے آ رہا ہے۔

تمام اسٹیشنوں کی عمارتیں ٹکٹ گھر اور پلیٹ فارم خستہ حال اور کھنڈر بن چکے ہیں، گلبائی منگھوپیر سائٹ اور اورنگی اسٹیشن کی لیول کراسنگ پر پھاٹک بھی موجود نہیں ہیں، کراچی ریلوے آپریشن کے دوران لیول کراسنگ پر ٹریفک روکنے کے لیے زنجیریں لگا کر بند کیا جائے گا۔

گلبائی پر پورٹ سے بھاری مال بردار گاڑیوں کی آمد و رفت کی وجہ سے ٹریفک روکنے سے ٹریفک جام اور حادثات کا ہونے کا بھی خدشہ ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں