The news is by your side.

Advertisement

“شہر تو بھیگ رہا تھا پہلی پہلی بارش میں”

اردو شاعری میں‌ برسات سے متعلق جہاں خوشی، ترنگ، سرمستی، عیش اور انبساط کا اظہار ملتا ہے، اور شعرا نے آسمان سے برستے ہوئے پانی کو اپنے اشعار میں طرح طرح سے باندھا ہے، وہیں کئی اشعار کسی کے اندر کا کرب، دکھ، ناکام حسرتوں، ادھوری خواہشوں اور جذباتی کشمکش کو بھی عیاں کرتے ہیں۔

خالد معین کی ایک خوب صورت غزل پیش ہے۔

غزل
رقص کیا کبھی شور مچایا، پہلی پہلی بارش میں
میں تھا، میرا پاگل پن تھا، پہلی پہلی بارش میں

پیہم دستک پر بوندوں کی آخر اس نے دھیان دیا
کھل گیا دھیرے دھیرے دریچہ پہلی پہلی بارش میں

ایک اکیلا میں ہی گھر میں خوف زدہ سا بیٹھا تھا
ورنہ شہر تو بھیگ رہا تھا پہلی پہلی بارش میں

آنے والے سبز دنوں کی سب شادابی، اس سے ہے
آنکھوں نے جو منظر دیکھا پہلی پہلی بارش میں

شام پڑے سو جانے والا! دیپ بجھا کر یادوں کے
رات گئے تک جاگ رہا تھا پہلی پہلی بارش میں

جانے کیا کیا خواب بُنے تھے، پہلے ساون میں، میں نے
جانے اس پر کیا کیا لکھا پہلی پہلی بارش میں

Comments

یہ بھی پڑھیں