The news is by your side.

Advertisement

ایوان کوگالی دے کر اپنی عزت میں اضافہ نہیں بلکہ گھٹیا پن کا مظاہرہ ہے، خواجہ آصف

اسلام آباد : وزیرخارجہ خواجہ آصف کا کہنا ہے کہ جواس ادارےکواستعمال کرکے وزیراعظم بننا چاہتےہیں اسے گالی دیتے ہیں، ایوان کو گالی دے کراپنی عزت میں اضافہ نہیں بلکہ گھٹیا پن کا مظاہرہ ہے،ایوان کوگالی دینےپراستحقاق کمیٹی کافوری اجلاس بلا نا چاہیے،نہیں آتے گرفتار کرکے لایا جائے۔

تفصیلات کے مطابق قومی اسمبلی میں اظہار خیال کرتے ہوئے وزیرخارجہ خواجہ آصف نے تحریک انصاف پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ پی ٹی آئی نے استعفے دیئے پھر رینگتے ہوئے ایوان میں واپس آئے، پارلیمنٹ کوگالی دینےکاسلسلہ بندہوناچاہیے، اداروں کے بغیر سیاستدانوں کا کوئی اثاثہ نہیں۔

وزیرخارجہ کا کہنا تھا کہ فیصلےجلسوں میں نہیں ایوانوں میں ہوتےہیں، خفیہ راستوں سےاقتدارمیں نہیں آسکتے، عمران خان اور شیخ رشید کو استحاق کمیٹی میں بلانا چاہئے، نہ آنے پر استحاق کمیٹی گرفتارکرنے کاحکم دے سکتی ہے، پارلیمنٹ کومضبوط بنائیں لیکن گالی دینےکاحق کسی کونہیں۔

خواجہ آصف نے کہا کہ ایوان میں بات کررہاہوں کسی چوک پرنہیں کھڑا، ان کے یہ تو حوصلے ہیں استعفیٰ دے کر شاہ محمود نے کہا قبول نہ کریں، پارلیمنٹ کی عزت ہم نے نہیں کرنی تو کسی اور سے بھی توقع نہ کریں، جواس ادارے کواستعمال کرکے وزیراعظم بننا چاہتے ہیں، اسےگالی دیتے ہیں، ایوان کو گالی دے کر اپنی عزت میں اضافہ نہیں گھٹیا پن کا مظاہرہ ہے۔

انکا کہنا تھا کہ ایوان کوگالی دینے پر استحقاق کمیٹی کا فوری اجلاس ہوناچاہیے، قصورجیسےواقعات کراچی سےپشاورتک ہرجگہ ہورہےہیں، کنٹینر پر چڑھنے والے تیسرے شخص کا پاکستان سے تعلق نہیں۔

وزیر خارجہ خواجہ آصف نے قومی اسمبلی میں تحریری جواب میں کہا کہ سارک کانفرنس ناکام بنانےمیں بھارت،بنگلا دیش کاکردارتھا، 1971 کےواقعات میں بنگلادیش نے اپنے لوگوں کوسزائیں دیں ، ہم نے کوشش کی کہ بنگلا دیش کے ساتھ تعلقات بہتر ہوں، تالی کبھی بھی ایک ہاتھ سے نہیں بجتی۔

خواجہ آصف کا کہنا تھا کہ کشمیرسمیت تمام مسائل کا حل بامعنی مذاکرات سےچاہتےہیں، بھارت پر بھی یہ بات واضح کی گئی ہے ، بھارت سےتعلقات کی بہتری کے لیے اقدامات کیے، نوازشریف مشکلات کےباوجودمودی کی حلف برداری میں گئے، بھارت نے 2014 میں سیکریٹری خارجہ مذاکرات معطل کیے، بھارت نے2015 میں کشمیر کو ایجنڈے سے نکالنے پر اصرارکیا۔

انھوں نے مزید کہا کہ بھارتی سیکریٹری خارجہ کادورہ پاکستان بغیر وجہ بتائےمنسوخ کیاگیا، بھارت نے سارک سربراہ کانفرنس سے بھی راہ فرار اختیار کی، 2017 میں ایل اوسی پربھارتی فائرنگ سے54پاکستانی جاں بحق ہوئے، بھارتی فائرنگ سے 20 پاکستانی ز خمی بھی ہوئے ، بھارت نے کلبھوشن سےفیملی کی ملاقات کوبھی سیاسی رنگ دیا۔


اگرآپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی فیس بک وال پر شیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں