The news is by your side.

Advertisement

مشرف دورمیں شہری پیسوں کے عوض امریکا کو دیے گئے، خواجہ آصف

اسلام آباد: :وزیر خارجہ خواجہ آصف کا کہنا ہے کہ مشرف دورمیں شہری پیسوں کے عوض امریکا کو دیے گئے، کسی ملک کےشام میں فوج بھیجنے پرردعمل نہیں دےسکتے،شام معاملےمیں براہ راست شامل ہوکرمشکلات میں نہیں پڑناچاہتے۔

تفصیلات کے مطابق وزیر خارجہ خواجہ آصف نے قومی اسمبلی میں بیان میں کہا کہ مشرف دورمیں بندے پیسوں کے عوض امریکا کو دیے گئے، ہاتھوں سے  بندھی گرہیں دانتوں سے کھولنی پڑتی ہیں، مشرف نے پیسےلیے اوراپنے شہری دیے، گوانتانا موبے جیل میں3پاکستانی بغیر الزام کے قید ہیں، اس معاملے پر امریکی حکام سے رابطے میں ہیں۔

علی محمد خان کا کہنا تھا کہ پاکستانی وزیراعظم کی امریکی ایئرپورٹ پرتلاشی لی گئی، امریکی پاکستان آتےہیں توبہت زیادہ پروٹوکول دیاجاتا ہے،جس پر خواجہ آصف نے کہا کہ وزیراعظم نجی دورے پر امریکاگئے تھے ، وزیراعظم کےپروٹوکول کے لیے درخواست نہیں کی گئی تھی، وزیراعظم قانون کے تابع رہنے کو  ترجیح دیتے ہیں، وزیراعظم کےعام شہری کی طرح سفر کرنےمیں کوئی عارنہیں۔

شام کی صورتحال پر وزیر خارجہ نے کہا کہ کئی ممالک کی فوج شام میں ہے، کسی ملک کےشام میں فوج بھیجنے پرردعمل نہیں دے سکتے،ایران شامی حکومت کی حمایت کررہاہے، عرب ممالک شام میں حکومت مخالف گروہوں کی حمایت کرتے ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ پاکستان شام کی صورتحال پر فی الحال غیرجانبدارہے، ہم شام کے مسئلے کا حل مذاکرات سے چاہتےہیں، ہم شام کے معاملے میں فریق نہیں ہیں، شام معاملے میں براہ راست شامل ہوکرمشکلات میں نہیں پڑنا چاہتے۔

خواجہ آصف نے کہا کہ پاکستان کو شام کے مہاجرین کی صورتحال پرتشویش ہے، شام کےمسئلے کےحل کی سفارتی کوششوں میں شریک ہے۔

قومی اسمبلی اجلاس میں نعیمہ کشور نے پوچھا امریکی سفارتکار نے پاکستانی نوجوان کوگاڑی کےنیچےکچل دیا، معاملے پر پولیس اوردفتر خارجہ کیا کارروائی کر رہے ہیں؟ جس پر وزیر خارجہ کا کہنا تھا کہ روڈ حادثے میں ملوث امریکی سفارت کا را بھی پاکستان میں ہے، امریکی سفارتخانے نے تحقیقات میں تعاون کی یقین دہانی کرائی ہے۔

انھوں نے مزید کہا کہ پولیس بھی اس مسئلےپرکام کررہی ہے، نوجوان کی ہلاکت پر قانون کے مطابق کارروائی ہوگی۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں۔ مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہچانے کے لیے سوشل میڈیا پر شیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں