The news is by your side.

Advertisement

نااہلی کیس سے متعلق خواجہ آصف نے سپریم کورٹ میں جواب جمع کروا دیا

اسلام آباد: نااہلی کیس سے متعلق جمع کروائے گئے جواب میں سابق وزیر خارجہ خواجہ آصف کا کہنا ہے کہ بطور رکن اسمبلی ملازمت کرنے پر آئینی یا قانونی پابندی نہیں۔ اسلام آباد ہائیکورٹ نے متحدہ عرب امارات کے قانون کی غلط تشریح کی۔

تفصیلات کے مطابق نااہلی کیس سے متعلق خواجہ آصف نے سپریم کورٹ میں جواب جمع کروا دیا۔

خواجہ آصف کا کہنا ہے کہ بطور رکن اسمبلی ملازمت کرنے پر آئینی یا قانونی پابندی نہیں۔ اسلام آباد ہائیکورٹ نے اماراتی قانون کی غلط تشریح کی۔ قانون فریقین کو باہمی شرائط طے کرنے کی اجازت دیتا ہے۔

خواجہ آصف نے اپنے جواب میں کہا ہے کہ عدالت نے جن نکات پر نااہلی کا فیصلہ دیا وہ درست نہیں، کاغذات نامزدگی میں اپنا پیشہ، کاروبار بتانا غلط نہیں۔ آمدن کا بڑا حصہ ذاتی کاروبار سے ہے جبکہ ملازمت سے آمدن کم ہے۔

مزید پڑھیں: عدالت نے خواجہ آصف کو نااہل قرار دے دیا

جواب میں کہا گیا کہ کاروبار آمدن سے زیادہ ہونے کی وجہ سے پیشہ کاروبار بتایا گیا۔ کاروبار سے آمدن 92 اور ملازمت سے 32 لاکھ ہے۔ کاغذات نامزدگی میں تنخواہ 9 ہزار درہم بتائی گئی۔ 62 لاکھ 80 ہزار غیر ملکی آمدن میں تنخواہ کے 32 لاکھ شامل تھے۔

جواب میں مزید بتایا گیا کہ خواجہ آصف کے دبئی کے اکاؤنٹ میں کوئی ٹرانزیکشن نہیں ہوئی۔ بند اکاؤنٹ کو ظاہر نہ کرنا کوئی غلط بیانی نہیں۔ اکاؤنٹ ظاہر نہ کرنا غیر ارادی غلطی تھی، کوئی فائدہ حاصل نہیں کیا گیا۔

جواب میں استدعا کی گئی کہ نااہل قرار دینے کا اسلام آباد ہائیکورٹ کا فیصلہ کالعدم قرار دیا جائے۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں۔ مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہچانے کے لیے سوشل میڈیا پر شیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں