امریکا کے ساتھ تعلقات پرنظرثانی کرنی ہوگی: خواجہ آصف Khawaja Asif
The news is by your side.

Advertisement

امریکا کے ساتھ تعلقات پر نظرثانی کرنی ہوگی: خواجہ آصف

اسلام آباد: وزیر خارجہ خواجہ آصف نے کہا ہے کہ اس وقت خطے میں امریکا اور بھارت کا گٹھ جوڑ ہے، دونوں کے مفادات یکساں ہیں اور بھارت اور امریکا سی پیک کے خلاف ایک مشترکہ محاذ بنا رہے ہیں۔

وزیر خارجہ کا کہنا تھا کہ امریکا کو ہمارے تعاون کا فائدہ ہوا، دوسری طرف نقصان ہم نےاٹھایا، ہمارے بریگیڈیر، کرنل اور لیفٹیننٹ شہید ہوئے۔

ان خیالات کا اظہار انھوں نے ایک ٹی وی انٹرویو میں کیا۔  خواجہ آصف کا کہنا تھا کہ امریکا ہمارا اتحادی نہیں، اگر اتحادی ہوتا، تو ایسی زبان استعمال نہیں کرتا۔ اتحادی کہنےسے پہلے اتحادی کا مطلب سمجھ لینا چاہیے۔ امریکا کے ساتھ تعلقات پر نظرثانی کرنی چاہیے، ہمیں عزت و وقار کے ساتھ جینا چاہیے۔

یہ بھی پڑھیں: امریکا کو واضح کردیا پہلے اپنا گھر درست کرے، خواجہ آصف

ان کا کہنا تھا کہ افغانستان میں سوویت یونین کے خلاف جنگ کو ہم نے جہاد کارنگ دیا، حالاں کہ سوویت یونین ہمارادشمن نہیں تھا۔ انھوں نے سوال کیا کہ امریکا افغانستان میں اتحادیوں کے ساتھ پرفارم کیوں نہیں کرسکا، حالاں کہ جو اسلحہ، ٹیکنالوجی امریکا کے پاس ہے وہ ہمارے پاس نہیں۔

انھوں نے مزید کہا کہ ایک دو سال میں ڈرون حملوں میں نمایاں کمی آئی ہے، جس کا مطلب ہے کہ یہاں دہشت گردوں کی پناہ گاہیں نہیں۔

امریکی کی پاکستان دشمنی

ادھر امریکا نے پاکستان کی امداد روکنے کے بعد ایک اور متعصابہ وار کیا ہے اور پاکستان کو مذہبی آزادی سے متعلق واچ لسٹ میں ڈال دیا ہے۔ پاکستان کو واچ لسٹ میں ڈالنے کا مطالبہ امریکی کمیشن کیا تھا۔

 


اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی وال پر شیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں