The news is by your side.

Advertisement

سندھ میں گندم کی قیمت بڑھنے کی وجہ بوریاں غائب ہونا ہے: خرم شیر زمان

کراچی: پی ٹی آئی رہنما خرم شیر زمان نے کہا ہے کہ گندم کی قیمت بڑھنے کی وجہ بوریاں غائب ہونا ہے، کاش وزیر اعلیٰ سندھ گندم کی بوریاں غائب ہونے پر وزیر اعظم کو خط لکھتے۔

تفصیلات کے مطابق آج خرم شیر زمان نے سندھ اسمبلی میں گندم کی قیمتوں میں اضافے پر تحریک التوا پیش کی، انھوں نے کہا گندم کی بوریاں غائب کی گئیں جس کی وجہ سے قیمت میں اضافہ ہوا۔

ان کا کہنا تھا نفرتیں پھیلانے کے لیے اسمبلی کو استعمال کیا جاتا ہے، سندھ کا مال چوری ہوتا ہے تو وزیر اعظم کو خط نہیں لکھا جاتا، سب بتا رہے ہیں کہ گندم کی بوریوں میں بجری بھری ہوئی ہے۔

خرم شیر زمان نے کہا سندھ کا مال لوٹا جا رہا ہے، گندم کی بوریاں غائب ہو رہی ہیں، بتایا جائے کہ گندم کی چوری میں ملوث افسران کے خلاف کیا کارروائی ہوئی۔

انھوں نے کہا مارچ میں گندم کی قیمت 3200 تھی، گندم کی بوریوں میں بجری بھر کر کرپشن کی جا رہی ہے، جب گندم چوری ہوتی ہے وزیر اعظم کو خط نہیں لکھا جاتا، ایوان میں بیٹھ کر سندھ کا درد اور تکلیف دکھائی جاتی ہے۔

پی ٹی آئی رہنما کا کہنا تھا فلور ملز اوپن مارکیٹ سے خرید رہے ہیں، اس پر ہم ضرور وزیر اعظم کو خط لکھیں گے، وزیر اعلیٰ سی سی آئی میٹنگ میں گندم کی کرپشن بھی اٹھائیں، اربوں کی کرپشن ہو رہی ہے، گندم گوداموں سے غائب ہے۔

دریں اثنا، خرم شیر زمان نے اسمبلی میں لاکھڑا کول مائنز سے کوئلے کی غیر قانونی فروخت پر بھی تحریک التوا پیش کی، کہا یومیہ ہزاروں ٹن کوئلہ نکال کر بغیر ٹینڈر کے اوپن مارکیٹ میں غیر قانونی فروخت ہو رہا ہے، اربوں روپے کا معاملہ ہے، ایوان میں زیر بحث آنا چاہیے۔ تاہم وزیر توانائی سندھ امتیاز شیخ نے کہا کہ کوئلہ بیچنے پر پابندی نہیں ہے، جس پر ڈپٹی اسپیکر نے قرارداد کو خلاف ضابطہ قرار دے کر مسترد کر دیا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں