site
stats
پاکستان

کوہستان ویڈیو اسکینڈل کی رپورٹ سپریم کورٹ میں پیش

اسلام آباد: کوہستان میں شادی کی تقریب میں رقص کرنے والی لڑکیوں کے قتل کے حوالے سے سیشن جج کی تیارکردہ رپورٹ سپریم کورٹ میں پیش کردی گئی۔

تفصیلات کے مطابق کوہستان ویڈیو اسکینڈل کی رپورٹ سپریم کورٹ میں پیش کردی گئی۔

رپورٹ کے مطابق کمیشن کے سامنے پیش کی گئی لڑکیاں وہ نہیں جو ویڈیو میں دکھائی دے رہی ہیں۔

رپورٹ میں کہا گیا کہ امینہ ظاہر کی گئی لڑکی کے دونوں انگوٹھے جلے ہوئے تھے۔ یہ نہیں ہو سکتا کہ کچن میں کام کرنے سے صرف دو انگوٹھے اور وہ بھی ایک ساتھ جل جائیں۔

رپورٹ میں مزید بتایا گیا کہ سرن جان نامی جس شخص نے خود کو لڑکی کا والد ظاہر کیا وہ لڑکی کی عمر بتانے سے قاصر تھے۔ سرن جان کی ظاہری عمر نادرا میں درج کی گئی تاریخ پیدائش سے مطابقت نہیں رکھتی۔

تیسری لڑکی جو بیگم جان بنا کر پیش کی گئی اس کی بھی عمر میں تضاد ہے۔

واضح رہے کہ سنہ 2012 میں ایک ویڈیو منظر عام پر آئی تھی جس میں ایک شادی کی تقریب میں کچھ لڑکیوں کو رقص کرتے اور تالیاں بجاتے دیکھا جاسکتا تھا۔ ان لڑکیوں کے بارے میں اطلاعات موصول ہوئیں کہ انہیں قتل کردیا گیا ہے جس کے بعد سپریم کورٹ نے واقعہ کا ازخود نوٹس لے لیا تھا۔

چند روز قبل اس واقعہ کی دوبارہ تحقیقات شروع کر دی گئی تھیں۔ اس حوالے سے عدالتی حکم پر کوہستان کے ڈی پی او، سیشن جج، خاتون پولیس آفیسر اور مقامی ڈی ایس پی پر مشتمل کمیشن نے کوہستان کا دورہ کیا۔ کمیشن نے چلاس کے علاقے گادر میں مقامی لوگوں سے ملاقاتیں کی اور بیانات بھی قلمبند کیے۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top