The news is by your side.

Advertisement

گورنر خیبرپختون خواہ نے کروڑوں روپے سرکاری خزانے میں‌ جمع کرادیے

پشاور: خیبرپختون خواہ کے گورنر شاہ فرمان نے کروڑوں روپے کا صوابدیدی فنڈ استعمال کرنے کے بجائے سرکاری خزانے میں واپس جمع کرادیا۔

اے آر وائی نیوز کے مطابق گورنر خیبر پختون خواہ نے مثالی قدم اٹھاتے ہوئے کروڑوں روپے کا صوابدیدی فنڈ استعمال کرنے کی بجائے سرکاری خزانے میں واپس جمع کروادیا۔

ترجمان گورنر ہاؤس کے مطابق شاہ فرمان کی ہدایت پر 9 کروڑ 60 لاکھ 21 ہزار 2 سو بائیس روپے خرچ کرنے کے بجائے حکومتی خزانہ میں جمع کرا دئے گئےجو قبائلی اضلاع میں گورنر کی صوابدید پر استعمال کے لئے گورنر سیکرٹریٹ کے بجٹ میں جاری کئے گئے تھے۔

ان کا کہنا تھا کہ 9 کروڑ 60 لاکھ 21 ہزار 2 سو بائیس روپے کا مجموعی فنڈ مرحلہ وار مالی سال 2019-20، 2020-21 اور 2021-22 میں جاری کیا گیا تھا۔ گورنر کے پی شاہ فرمان کا کہنا تھا کہ سابقہ فاٹا اب کے پی کا حصہ ہے اورصوبائی حکومت ہی آئینی و قانونی طور پر قبائلی اضلاع کی تعمیر و ترقی سمیت تمام امور کی زمہ دار ہے۔

اُن کا کہنا تھا کہ فاٹا انضمام کے بعد قبائلی اضلاع کیلئے فنڈز کو بطور گورنر صوابدید استعمال کرنا درست نہیں سمجھتا تھا اس لیے یہ رقم واپس جمع کروادی، فاٹا انضمام کے انتظامی و قانونی معاملات کو نمٹانے میں اپنا موثر آئینی کردار ادا کرتے رہیں گے۔

واضح رہے کہ سابقہ فاٹا جو خیبرپختون خواہ میں انضمام سے قبل وفاق کے زیرانتظام علاقہ ہوا کرتا تھا اور گورنر کے پی ان علاقوں کے لئے وفاقی حکومت کے نمائندہ ہوتے تھے، جنہیں اختیارات اور بے شمار فنڈز کے ساتھ ساتھ ایک بھاری رقم صوابدیدی فنڈ کے طور پر جاری کی جاتی تھی۔

Comments

یہ بھی پڑھیں